-----

بائیں ہاتھ سے لکھنے والے زیادہ ذہین ہوتے ہیں، تحقیق

Left Hand

ایک نئی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہےکہ بائیں ہاتھ سے لکھنے والے لوگ دائیں ہاتھ سے لکھنے والوں کے مقابلے میں زیادہ ذہین ہوتے ہیں۔

محققین کی تحقیق کے مطابق تاریخ سے بھی یہ بات ثابت ہوتی ہےکہ جتنی نامور شخصیات گزری ہیں وہ سب الٹے ہاتھ کے لکھاری تھے جن میں مارک ٹوئن ،میری کیوری، نیکولا ٹیسلا اور ارسطو شامل ہیں۔

امریکا کے سابق صدر بارک اوبامہ، مشہور فٹبالر لیونل میسی اور مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس بھی بائیں ہاتھ سے لکھتے ہیں۔

تحقیق سے یہ بھی پتا چلا بائیں ہاتھ سے لکھنے والے افراد ریاضی میں بھی کافی تیز ہوتے ہیں اور ان کے لیے ریاضی کے مشکل ترین سوالات حل کرنا بھی بائیں ہاتھ کا کھیل ہوتا ہے۔

ماہرین کے مطابق دماغ کے دو حصہ ہوتے ہیں اور نرو سیل دماغ کے دونوں حصوں سے جڑی ہوئی ہوتی ہے۔ لیکن جھکاو زیادہ بائیں ہاتھ کی طرف ہوتا ہے جس کی وجہ سے یہ صلاحیت رکھنے والے افراد اپنے ذہن میں معلومات کی ذخیرہ اندوزی پر بھی کمال مہارت رکھتے ہیں۔

ماہرین کے نزدیک بائیں ہاتھ سے لکھنا کسی ٹیلنٹ سے کم نہیں۔

تحقیق کے مطابق دنیا کی 10 فیصد سے 13.5 فیصد تک آبادی بائیں ہاتھ سے لکھتی ہے۔

دماغی صلاحیت کا ارتقاع ہاتھوں سے ہوتا ہے یہی وجہ ہے کہ اس کا تعلق دماغی علم سے ہوتا ہے۔ جو لوگ بائیں ہاتھ سے لکھتے ہیں ان کی دماغی صلاحیتیں زیادہ تیز ہوتی ہیں وہ بات کو جلدی سمجھ جاتے ہیں اور ان کی یادداشت اتنی اچھی ہوتی ہےکہ انہیں دیر تک چیزیں یاد رہتی ہیں۔