Can't connect right now! retry

پاکستان
06 جولائی ، 2020

پاکستان اور چین کے درمیان آزاد پتن ہائیڈرو پاور منصوبے پر دستخط

پاکستان اور چین کے درمیان آزاد پتن ہائیڈرو پاور منصوبے پر دستخط کی تقریب ہوئی جس میں وزیراعظم عمران خان بھی شریک ہوئے۔

آزاد پتن پن بجلی منصوبہ چائنا پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک)  کا حصہ ہے جس پر ڈیڑھ ارب ڈالر کی لاگت آئے گی اور اس سے 700 میگا واٹ سے زائد بجلی پیدا ہوگی۔

اس منصوبے کے لیے ایندھن درآمد کرنے کی ضرورت نہیں ہوگی اور یہ ملک کو سستی اور آلودگی سے پاک بجلی پیداکرنے میں مدد دے گا جب کہ یہ منصوبہ دریائے جہلم پر واقع ہے جو  2026 میں مکمل ہونے کی امید ہے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ سی پیک ہمارے ملک کو بہت اوپر لے کر جائے گا، یہ پاورپروجیکٹ قرضہ لے کر نہیں بنا رہے ہیں بلکہ یہ پروجیکٹ  سرمایہ کاری ہے۔

انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے ہم نے فیول درآمد کرکے بجلی بنائی جس سے بجلی منہگی ہے اور بجلی منہگی ہونے سے ملک کی معیشت پر بہت برا اثر پڑا جب کہ ہائیڈرو پاورپروجیکٹ ماحول پر برا اثربھی نہیں ڈالتا۔

ان کا کہنا ہے کہ خوشی ہے کہ اب پاکستان میں بجلی پانی سے بنے گی، ماضی میں بجلی کی پیداوار کے لیے درآمدی تیل پر انحصار کیا گیا، درآمدی تیل سے عوام کو بجلی کی بڑی بھاری قیمت ادا کرنا پڑی۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ سی پیک چین اور پاکستان کی لازوال دوستی کی مثال بنے گا  اور سی پیک کے منصوبے پاکستان کے لیے بہت مفید ہیں جو ہمارے ملک کو بہت اوپر لے کر جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ سی پیک منصوبہ مختلف مراحل میں آگے بڑھ رہا ہے اور چین نے پچھلے 20 سال میں بہت ترقی کی ہے جس سے ہمیں بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM