Can't connect right now! retry

پاکستان
27 اکتوبر ، 2020

وزیراعظم عمران خان کی بھارت کو ایک بار پھر امن کی پیشکش

مقبوضہ کشمیر کے یوم سیاہ کے موقع پر وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ آج کا دن انسانی تاریخ کے ایک تاریک باب کو اجاگر کرتا ہے۔

مقبوضہ جموں کشمیر میں بھارتی قبضے کے 73سال مکمل ہونے پر وزیراعظم عمران خان نے اپنے بیان میں کہا کہ 73 سال قبل بھارت نے جموں و کشمیر پر زبردستی قبضہ کیا اور کشمیریوں کو ان کے مستقبل کا فیصلہ کرنے کے حق سے محروم کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ بھارت نے کشمیریوں سے حق خود ارادیت کا حق چھین لیا اور کشمیریوں کی دکھ بھری داستان طویل عرصے تک چلتی رہی ہے، 5 اگست 2019 کو کشمیریوں کے لیے ظلم کی نئی داستان شروع ہوئی، بھارت نے 9 لاکھ فوج کے بل بوتے پر80 لاکھ کشمیریوں کو یرغمال بنا رکھا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت نے کشمیریوں کو حاصل بچے کچھے حقوق بھی سلب کر لیے ہیں اور کشمیری قیادت اور ہزاروں نوجوانوں کو بھارت نے جیلوں میں ڈال دیا ہے، مقبوضہ کشمیر کو ایک طرح کی جیل بنا دیا گیا ہے۔

عمران خان نے کہا کہ کشمیریوں کے لیے بدقسمت لمحہ ہےکہ وہ نہ بھارتی شہری ہیں اور نہ انہیں حق خودارادیت ملا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سلامتی کونسل نے کشمیریوں کو ووٹ سے اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا حق دیا تھا، کشمیریوں کو حق خودرادیت ملنے تک میں جدوجہد جاری رکھیں گے۔

انہوں نے کہا کہ دنیا کے ہر پلیٹ فارم پر کشمیریوں کے لیےآواز اٹھاتا رہوں گا، کشمیریوں پر ہونے والے مظالم کو دنیا بھر میں اجاگر کروں گا۔

وزیراعظم پاکستان کا کہنا تھا کہ کشمیر میں ریاستی دہشتگردی واضح ہے اور وہاں اجتماعی قبریں بھی ملی ہیں، مقبوضہ کشمیر میں ماورائے عدالت قتل ہو رہے ہیں، میڈیا کی آواز بند کر دی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم امن چاہتے ہیں، میں آج بھی بھارت سے کہتا ہوں کہ پاکستان امن چاہتا ہے، اقتدار سنبھالتے ہی بھارت سے کہا تھا آپ ایک قدم آئیں ہم دو قدم آپکی طرف آئیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ آج برصغیر کے لوگوں کے لیے سب سے اہم چیز امن ہے، امن سے ہی ترقی کی راہیں کھیلں گی اور خوشحالی آئے گی۔

عمران خان نے کہا میں پھر بھارت سے کہتا ہوں کہ ہم امن کے لیے تیار ہیں، امن کے لیے بھارت کو مقبوضہ کشمیر کا فوجی محاصرہ ختم کرنا ہو گا، امن کے لیے کشمیریوں کو ان کا حق خود ارادیت دینا ہو گا۔

ان کا کہنا تھا کہ بھارت کشمیریوں کو ان کا حق خودارادیت دے تاکہ وہ اپنےمستقبل کا فیصلہ استصواب رائے سے کر سکیں، عالمی برادری نے جو وعدہ کیا تھا وہ حق کشمیریوں کو ملنا چاہیے۔

یاد رہے کہ بھارت نے 27 اکتوبر 1947 کو کشمیریوں کی خواہشات کے برعکس جموں و کشمیر میں اپنی فوج اتار کر اس پر ناجائز قبضہ کیا تھا جس کے خلاف آج لائن آف کنٹرول کے دونوں اطراف اور دنیا بھر میں بسنے والے کشمیری یوم سیاہ منا رہے ہیں۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM