دنیا
12 جنوری ، 2022

چین میں تعینات افغان سفیر کئی ماہ سے تنخواہ نہ ملنے پر مستعفی

کابل کی طرف سے گزشتہ سال اگست سے تنخواہیں نہیں بھیجی گئیں جس وجہ سے یہاں سفارت خانے کے بہت سے سفارت کارپہلے ہی جاچکے ہیں : جاوید احمد —فوٹو: رائٹرز
کابل کی طرف سے گزشتہ سال اگست سے تنخواہیں نہیں بھیجی گئیں جس وجہ سے یہاں سفارت خانے کے بہت سے سفارت کارپہلے ہی جاچکے ہیں : جاوید احمد —فوٹو: رائٹرز 

 چین میں تعینات  افغان  سفیر جاوید احمد قائم نے طالبان کے اقتدار پر قبضے کے بعد کئی ماہ سے  تنخواہ نہ ملنے پر استعفیٰ دے دیا۔

جاوید احمد قائم نے ٹوئٹر پر جاری ایک بیان میں اپنا عہدہ چھوڑنے کی اطلاع دیتے ہوئے کہا کہ' کابل کی طرف سے گزشتہ سال اگست سے تنخواہیں نہیں بھیجی گئیں جس وجہ سے یہاں سفارت خانے کے بہت سے سفارت کارپہلے ہی جاچکے ہیں '۔

انہوں نے کہا کہ عہدہ چھوڑنے کی ذاتی اور پیشہ ورانہ بہت سی وجوہات ہیں لیکن میں یہاں ان کا ذکر نہیں کرنا چاہتا جبکہ انہوں نے ٹوئٹ کے ساتھ ایک خط بھی اپ لوڈ کیا جس میں کہا گیا کہ سفارت خانے میں ایک نئے شخص کو تفویض کیاگیا ہے، اس کا نام 'سادات' ہے۔

جاوید قائم کے خط میں مزید کہا گیا کہ یکم جنوری تک سفارت خانے کے ایک بینک اکاؤنٹ میں ایک لاکھ ڈالرز باقی تھے اور ساتھ ہی دوسرے میں نامعلوم رقم بھی تھی۔

انہوں نے کہا کہ میں نے تمام مقامی عملے کو 20 جنوری 2022 تک تنخواہوں کی ادائیگی کر دی ہے اور ان کی ملازمتیں ختم ہو گئی ہیں۔

دوسری جانب افغانستان کے وزارت خارجہ نے فوری طور پر اس بارے میں کوئی تبصرہ نہیں کیا کہ اب جاوید احمد کی جگہ چین میں ان کا سفیر کون ہوگا۔

اس کے علاوہ چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان وانگ وین بِن نے منگل کو بریفنگ میں کہا کہ جاوید احمد نے چین چھوڑ دیا ہے، یہ تفصیلات بتائے بغیر کہ وہ کب اور کہاں گئے ۔

واضح رہے کہ چین سمیت بین الاقوامی حکومتوں نے طالبان کی حکومت کو اب تک تسلیم نہیں کیا جس کی وجہ سے سخت پابندیوں نے افغانستان کی معیشت کو مفلوج کر کے رکھ دیا ہے۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM