Can't connect right now! retry

پاکستان
26 اکتوبر ، 2018

حکومتی عدم توجہ: تشدد کاشکار خواتین کی معاونت کا واحد ادارہ بندش کے قریب

وائلنس اگینسٹ وومن سینٹر(وی اے ڈبلیو سی) ملتان 

پاکستان میں خواتین پر تشددکے خلاف ان کی معاونت کے لیے قائم واحد ادارہ 'وائلنس اگینسٹ وومن سینٹر(وی اے ڈبلیو سی) ملتان حکومت کی بے توجہی کے باعث بند ہونےکے قریب ہے۔

اس ادارے کے بند ہونے سے ملتان میں متاثرہ خواتین کا واحد سہارہ ختم ہونے کے ساتھ خواتین پر تشدد کے واقعات میں اضافے کا خدشہ ہے۔

ذرائع کے مطابق ادارے کے ملازمین کو جولائی میں ہونے والے عام انتخابات کے بعد سے تنخواہیں نہیں دی گئیں جب کہ عمارت کے بجلی اور فون کے بل بھی ادا نہیں کیے گئے۔

ادارے کے ایک سینئر اہلکار نے نام نہ بتانے کی شرط پر بتایا " ہمارے فون بل کی ادائیگی نہ ہونے سے منقطع کر دیے گئے ہیں اور اگر بجلی کی فراہمی بھی معطل کر دی گئی تو ہمیں مجبورا کام بند کرنا پڑے گا۔"

اہلکار کا کہنا تھا کہ فنڈ جاری نہ ہونے کے باوجود سینٹر کے ملازمین متاثرہ خواتین کو قانونی معاونت، رہائش اور رہنمائی فراہم کر رہے ہیں۔

حاصل شدہ معلومات کے مطابق گزشتہ سات ماہ کے دوران ادارے نے 2588 کیسز میں مدد فراہم کی جس میں 1600 گھریلو تشدد کے واقعات، 234 ہراساں کرنے ، 65 زناء بالجبر اور 147 جان سے مارنے کی دھمکیوں کے کیسز تھے۔

اکتوبر 2017 میں پنجاب وومن پروٹیکشن اتھارٹی ایکٹ کے تحت قائم کیے جانے والے سینٹر کا مقصدتشدد کا شکار خواتین کو ہفتے کے ساتوں دن اور 24 گھنٹے مدد فراہم کرنا ہے۔

خاص طور پر یہ ادارہ گھریلو مار پیٹ ، زناء بالجبر اور جنسی تشدد کی ماری خواتین کو مدد فراہم کرتا ہے۔ دوسرے مرحلے میں لاہور، فیصل آباد اور راولپنڈی میں بھی اسی نوعیت کے سینٹر ز کے قیام کا منصوبہ تھا۔

ملک میں صنف کی بنیاد پر ہونے والے تشدد کے واقعات سے نمٹنے کے لیے جدوجہد جا ری ہے۔

لاہور میں قائم پاکستان انسانی حقوق کمیشن کے مطابق گزشتہ سال پاکستان میں غیرت کے نام پر قتل کی 100 سے زائد وارداتیں رپورٹ ہوئیں ، جب کہ جنسی زیادتی کے 344 اور گھریلو بدسلوکی کے 53 واقعات رپورٹ ہوئے۔

سینٹر کے بقایا جات میں 55 ملازمین اور 15وکلاء کی چار ماہ کی تنخواہ کے علاوہ بجلی اور فون کے بلز ہیں جن کی مجموعی مالیت تقریباً 78 لاکھ روپے بنتی ہے لیکن ابھی تک ادارے میں کام کرنے والے افراد خواتین کو بلا تعطل ہر ممکن معاونت فراہم کر رہے ہیں جس کا مطلب ہے کہ وہ چار ماہ سے بغیر تنخواہ اپنے فرائض پوری تندہی سے انجام دے رہے ہیں۔

تاہم ملازمین کا کہنا ہے کہ حالات میں بہتری نہیں آئی تو اس کا خمیازہ تشدد کی ماری خواتین کو بھگتنا ہو گا۔

سینٹر کے ایک اہلکار نے کہا کہ " ہم اب اس قابل نہیں رہےکہ جیسی سہولیات ہم ماضی میں فراہم کر رہے تھے اسے جاری رکھ سکیں۔ وکلاء کو بھی چار ماہ سے تنخواہیں نہیں ملیں جس کی وجہ سے ہم متاثرہ خواتین کی جانب سے دائر مقدمات کی عدالت میں پیروی جاری رکھ سکیں۔ "

اس سلسلے میں جب جیو نیوز نے صوبائی وزیر اطلاعات اور حکومتی ترجمان فیاض الحسن چوہان سے رابطہ کرنے کی کوشش کی تو ان کی طرف سے کوئی جواب موصول نہیں ہوا۔

تاہم جیسے ہی صوبائی حکومت اپنا موقف دے گی اسے شائع کر دیا جائے گا۔

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM