Can't connect right now! retry

صحت و سائنس
19 جون ، 2019

بچوں کو امتحان کے دنوں میں ذہنی دباؤ سے کیسے بچائیں؟

اگر آپ کا بچہ ٹھیک سے نہیں سو رہا، اسے بھوک نہیں لگ رہی یا اس کی سوچ منفی ہوتی جارہی تو ان تمام علامات کا مطلب یہی ہے کہ وہ امتحانی دباؤ کا شکار ہے۔ فوٹو: فائل

والدین امتحان کے دنوں میں اپنے بچوں کی عادات  اور ان میں ہونے والی تبدیلیوں پر خاص نظر رکھیں، کہ کہیں آپ کا بچہ امتحانات کی وجہ سے دباؤ کا شکار تو نہیں؟

اگر آپ کا بچہ ٹھیک سے سو نہیں رہا، اسے بھوک نہیں لگ رہی یا اس کی سوچ منفی ہوتی جارہی تو ان تمام علامات کا مطلب یہی ہے کہ وہ امتحانی دباؤ کا شکار ہے اور اس کی وجہ سے بچوں ڈپریشن کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔

سر درد اور پیٹ میں درد بھی امتحانی دباؤ کی علامات میں سے ایک ہیں اگر آپ کو اپنے بچے میں امتحانات کے دنوں میں یہ تمام علامات ظاہر ہوں تو فوری طور پر اپنے بچے سے بات کیجیے اور اسے اعتماد دیں کہ اس کی تیاری بھرپور ہے تاکہ اس کی سوچ منفی نہ ہو۔

اسی طرح اگر آپ کے بچوں میں امتحان کے دنوں میں وزن میں کمی، چڑچڑا پن، بھوک نہ لگنا یہ اس طرح کی کوئی بھی کیفیت پائی جائے تو گھبرانے کی ضرورت نہیں بلکہ اپنے بچوں کو اس مسئلے کے حل تلاش کریں۔

آئیے اس مضمون میں ہم آپ کو مذکورہ علامات کا حل بتاتے ہیں۔

بچوں کی ڈائٹ کا خیال :

فوٹو: فائل

پڑھائی کے دوران بچوں کو کسی چیز کی فکر نہیں ہوتی کہ انہیں کیا کھانا ہے اور کیا پینا ہے۔ والدین کو چاہیے کہ وہ بچوں کی خوراک کا خاص خیال کریں جس میں سبزیاں، پھل اور زیادہ پانی پینا شامل ہو۔ 

برگر ، چائے ، کافی اور تلی ہوئی اشیاء کا زیادہ استعمال آپ کے بچے کو سست، چڑچڑا اور موڈی بنا سکتا ہے۔

مکمل نیند:


فوٹو: فائل

صحت مند زندگی کے لیے مکمل رات کی نیند لینا نہایت ہی ضروری ہوتا ہے۔ امتحان کے دنوں میں ساری ساری رات پڑھنا نقصان کا باعث بنتا ہے۔ 

والدین کو چاہیے کہ وہ اس بات کا خاص خیال رکھیں کہ ان کا بچہ رات میں چھ سے سات گھنٹے ضرور سوئے۔ مکمل نیند لینے سے بچوں میں سوچنے کہ صلاحیت پیدا ہوتی ہے۔

جسمانی طور پر فعال:

فوٹو: فائل

جسمانی طور پر فعال ہونا صحتمندی کی نشانی ہوتی ہے۔ اگر آپ چاہتے ہیں کہ آپ کا بچہ امتحان اچھے طریقے سے دے تو یہ بات بہت اہم ہے کہ جسمانی طور پر فٹ ہو۔ 

بچوں کی روٹین میں اگر ایسے کھیل شامل ہوں جس میں بھاگ دوڑ، تیراکی وغیرہ شامل ہو تو آپ کا بچہ کبھی بھی ڈپریشن یا دباؤ محسوس نہیں کرے گا بلکہ امتحان میں بھی بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرے گا۔

مثبت سوچ:

فوٹو: فائل

اپنے بچوں کو یقین دلائیں کہ وہ امتحان میں اچھی کارکردگی دکھائے گا۔ نا کہ آپ اس پر دباؤ ڈالیں  کہ تمہارا اپنی کلاس کے اس بچے سے مقابلہ ہے اور تم نے پوزیشن لینی ہے۔ بچوں کو ہمیشہ مثبت سوچ دیں تاکہ اس میں اعتماد پیدا ہو۔

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM