Can't connect right now! retry

پاکستان
29 نومبر ، 2019

’ڈیم فنڈز کی مد میں جمع ہونے والے 12ارب روپے واپڈا کو ٹرانسفر کیے جائیں‘

یہ بھی بتایا جائے کہ ڈیم فنڈز کی پبلسٹی پر کتنا خرچہ آیا اور یہ ڈیمز کے لیے تشہیر تھی یا کسی اور کے لیے؟ رکن قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل خواجہ آصف— فوٹو: فائل

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی آبی وسائل کے رکن خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ سپریم کورٹ کو لکھا جائے کہ ڈیم فنڈز کی مد میں جمع ہونے والے 12ارب روپے واپڈا کو ٹرانسفر کرے۔

انہوں نے کہا کہ یہ بھی بتایا جائے کہ ڈیم فنڈز کی پبلسٹی پر کتنا خرچہ آیا اور یہ ڈیمز کے لیے تشہیر تھی یا کسی اور کے لیے؟

قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل نے ڈیم فنڈ پبلسٹی کے اخراجات کے تخمینے کے لیے پیمرا سے تفصیلات منگوانے کی سفارش کر دی ۔

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے آبی وسائل کا اجلاس نواب محمد یوسف تالپور کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوا۔

واٹر اینڈ پاور ڈویلپمنٹ اتھارتی (واپڈا) کے ممبر واٹر زاہد درانی نے کمیٹی کو بتایا کہ ڈیم فنڈ کی مد میں جمع ہونے والے 12ارب روپے سپریم کورٹ کے پاس ہیں جس پر  رکن کمیٹی خواجہ آصف نے کہا کہ یہ پیسے واپڈا کو دیے جائیں۔

اجلاس میں سندھ محکمہ آبپاشی کے حکام نے چشمہ جہلم لنک کینال پر 25 میگا واٹ پن بجلی منصوبے کی مخالفت کر دی جس پر کمیٹی نے معاملہ مشترکہ مفادات کونسل کو بھیجنے کی سفارش کر دی۔

واپڈا حکام نے بتایا کہ ماسٹر پلان کے تحت 2050 تک تین مرحلوں میں پانی ذخیرہ کرنے کی سہولت 30 ملین ایکڑ فٹ بڑھائی جائے گی ۔

رکن کمیٹی خواجہ آصف نے کہا کہ گنا بہت زیادہ پانی استعمال کرتا ہے ، بیرون ملک سے چینی سستی درآمد کی جا سکتی ہے، ایک کمپنی 35کروڑ روپے کا پانی خریدتی ہے اور 55ارب روپے کا بیچتی ہے۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM