آپ کے لیڈر نے جیل کاٹی تو آپ کیوں نہیں کاٹ سکتے؟ چیف جسٹس کا آغا سراج کے وکیل سے مکالمہ

آغا سراج درانی جیل میں گئے ہی نہیں ہیں، وہ گھر میں ہی سب جیل بناکر رہ رہے ہیں: وکیل نیب/ فائل فوٹوو
آغا سراج درانی جیل میں گئے ہی نہیں ہیں، وہ گھر میں ہی سب جیل بناکر رہ رہے ہیں: وکیل نیب/ فائل فوٹوو

اسلام آباد: چیف جسٹس پاکستان جسٹس عمر عطا  بندیال  نے آغا سراج درانی کی درخواست  ضمانت کی سماعت میں ان کے وکیل  سے مکالمہ کیا کہ آغا سراج درانی کے پاس ان کے لیڈر کی اعلیٰ مثال موجود ہے، آپ کے لیڈر نے اتنے سال جیل کاٹی ہے تو آپ کیوں نہیں کاٹ سکتے؟

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی  میں تین  رکنی بینچ نے آغا سراج  درانی  کی  درخواست  ضمانت کے کیس  کی  سماعت  کی جس  میں آغا سراج اور نیب کے وکیل عدالت  میں پیش  ہوئے۔

دورانِ سماعت جسٹس عائشہ ملک نے سوال کیا کہ آغا سراج درانی کا بے نامی داروں سے کوئی تعلق نہیں تو اثاثوں کے کاغذات ان کے لاکر سے کیوں ملے؟ جب کہ جسٹس منصور نے پوچھا کہ بے نامی دار آغا سراج درانی کے ملازم ہیں تو ان کے زیر اثر کیسے نہیں؟

چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے آغا سراج کے وکیل سے مکالمہ کیا کہ آپ کے گن مین کے نام پر بھی ایک پلاٹ ہے اور آپ کہہ رہے ہیں آپ کا گن مین سے تعلق نہیں، گن مین سے اعتماد کا گہرا رشتہ ہوتا ہے کیونکہ وہ پستول واپس آپ پر بھی تان سکتا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ آپ نے 2009 کے بعد اپنے خاندان کی جائیدادیں رجسٹرڈ کی ہیں، اس نکتے پر دلائل دیں کہ 1993 سے  2009 تک آپ کے پاس بچت تھی کہ مزید انویسٹمنٹ کی۔

جسٹس عمرعطا بندیال  نے کہا کہ غلط طریقے سے کمایا گیا پیسہ تو محفوظ نہیں رہتا۔

اس  دوران نیب کے وکیل نے بتایا کہ آغا سراج درانی جیل میں گئے ہی نہیں ہیں، وہ گھر میں  ہی  سب  جیل بناکر رہ  رہے ہیں۔

نیب کے وکیل کی جانب سے آگاہ کرنے پر چیف جسٹس نے آغا سراج  کے وکیل سے مکالمہ کیا کہ جیل ہر ایک کے لیے برابر ہونی چاہیے، آغا سراج درانی کے پاس ان کے لیڈر کی اعلیٰ مثال موجود ہے، آپ کے لیڈر نے اتنے سال جیل کاٹی ہے تو آپ کیوں نہیں کاٹ سکتے؟

بعد ازاں عدالت نے درخواست  ضمانت پر سماعت کل تک  ملتوی کردی۔

مزید خبریں :