اسرائیل نے دیوار کے 'آرپار' دیکھنے والی ڈیوائس تیار کرلی

یہ ٹیکنالوجی زندہ اجسام اور ساکت اشیا کے درمیان فرق بھی کرسکتی ہے / فوٹو بشکریہ کامیرو ٹیک
یہ ٹیکنالوجی زندہ اجسام اور ساکت اشیا کے درمیان فرق بھی کرسکتی ہے / فوٹو بشکریہ کامیرو ٹیک

ماہرین نے آرٹی فیشل انٹیلی جنس (اے آئی) کی مدد سے ایسی ٹیکنالوجی تیار کرلی ہے جو 'دیوار کے پار' دیکھنا ممکن بنا دیتی ہے۔

یہ ٹیکنالوجی فوجی مقاصد کے لیے تیار کی گئی ہے جس کے ذریعے سکیورٹی اہلکار کسی دیوار کے پار زندہ اجسام اور دیگر اشیا کو دیکھ سکتے ہیں۔

زاویر 1000 نامی ٹیکنالوجی امیجنگ سلوشنز کمپنی کامیرو ٹیک نے تیار کی ہے جس کا تعلق اسرائیل سے ہے۔

اس کمپنی کے مطابق اس سسٹم میں اے آئی پر مبنی لائیو ٹریکنگ سسٹم موجود ہے جو ایک سی تھرو دی وال ٹیکنالوجی کے ساتھ مل کر کام کرتا ہے۔

اس طرح صارف کے لیے 'دیوار کے پار' ساکت اشیا یا انسانوں کو  دیکھنا ممکن ہوجاتا ہے۔

کمپنی کے مطابق ٹیکنالوجی زندہ اجسام کی درست شناخت کرتی ہے بلکہ یہ بھی بتاسکتی ہے کہ کوئی فرد بیٹھا ہوا ہے، کھڑا ہے یا لیٹا ہوا ہے۔

اس سے بھی زیادہ حیران کن چیز یہ ہے کہ سسٹم صارفین کو اشیا کی لمبائی بھی بتا سکتا ہے یا یہ بتاتا ہے کہ جو زندہ جسم نظر آرہا ہے ہے وہ کسی بچے کا ہے، بالغ شخص کا یا کسی جانور کا۔

اس ڈیوائس کو ایک فرد استعمال کرتا ہے اور بس ایک بٹن دبا کر وہ 10.1 انچ کے ڈسپلے پر سب تفصیلات دیکھ سکتا ہے۔

کمپنی نے بتایا کہ یہ ٹیکنالوجی متعدد زندگی بچانے والے آپریشنز کو کامیاب بنا سکے گی اور سکیورٹی اداروں کے لیے گیم چینجر ثابت ہوگی۔

ابھی تو یہ اسرائیلی فوج کو دستیاب ہے مگر امکان ہے کہ بہت جلد یہ ڈیوائس دنیا کے دیگر حصوں میں بھی دستیاب ہوگی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM