شہنشاہ قوال نصرت فتح علی خان کو بچھڑے 25 برس گزرگئے

فن قوالی کو نئی جہت دینے والے موسیقی کی دنیا کے بے تاج بادشاہ استاد نصرت فتح علی خان کی آج  25 ویں برسی  ہے۔

نصرت فتح علی خان کو اپنے منفرد انداز گائیکی سے عالمگیر شہرت ملی، وہ قوالی، گیت، غزل اور کلاسیکل سمیت گائیکی کی ہر صنف پر عبور رکھتے تھے۔

استاد نصرت فتح علی خان گنیز ورلڈ ریکارڈ میں جگہ بنانے کے ساتھ کئی قومی اور بین الاقوامی ایوارڈز اپنے نام کرچکے ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ شہنشاہ قوال کو 25 سال  گزرجانے کے بعد  ان کی بنائی دھنیں اور آواز آج بھی لوگوں کے کانوں میں رس گھول رہی ہیں۔

 1995 میں نصرت فتح علی خان کا نام پوری دنیا میں اس وقت روشن ہوا جب کینیڈ ا کے گٹارسٹ مائیکل بروک مغربی سازوں پر ان کے کئی فیوژن مارکیٹ میں لے آئے، پیٹر گیبریل کے ساتھ ان کے البم مست مست کی گونج بھی پوری دنیا میں سنی گئی، انہیں فن موسیقی کا دیوتا کہا گیا۔

نصرت فتح علی کی فنی تربیت استاد مبارک علی خان نے کی، انہیں پہلی عوامی پذیرائی 1971 میں قوالی حق علی علی سے ملی۔

نصرت فتح علی خان کے 125 البم ریلیز ہوئے اوران کا نام گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں درج ہوا جب کہ میڈونا جیسی گلوکارہ بھی ان کے ساتھ گانے کی خواہش مند تھی۔

 نصرت فتح علی 16 اگست 1997  کو جہان فانی سے کوچ کرگئے لیکن قوالی کی دنیا میں ایک ایسی صبح کرگئے جس کی شام نہیں ہوتی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM