صحت و سائنس
29 ستمبر ، 2022

امریکا میں موٹاپے اور بھوک کے خاتمے کے لیے اربوں ڈالر کے منصوبے کا اعلان

سرکاری اعدادوشمارکے مطابق کم و بیش 42 فیصد بالگ امریکی موٹاپے اور 10 فیصد گھرانے خوارک کی قلت کا شکار ہیں/ فائل فوٹو
سرکاری اعدادوشمارکے مطابق کم و بیش 42 فیصد بالگ امریکی موٹاپے اور 10 فیصد گھرانے خوارک کی قلت کا شکار ہیں/ فائل فوٹو

امریکا میں موٹاپے اور بھوک کے خاتمے کے لیے اربوں ڈالر کے منصوبے کا اعلان کر دیا گیا۔

 تقریباً  نصف صدی کے بعد وائٹ ہاؤس میں بھوک، غذائیت اور صحت کے موضوع پرکانفرنس کا انعقاد کیا گیا جس کی صدارت صدر بائیڈن نے کی۔

سرکاری اعدادوشمارکے مطابق کم و بیش 42 فیصد بالگ امریکی موٹاپے اور 10فیصدگھرانے خوارک کی قلت کا شکار ہیں۔

 وائٹ ہاؤس کا کہنا ہےکہ خراب خوراک موٹاپے، شوگر، ہائی بلڈ پریشر اورکینسر کا باعث بنتی ہے۔

یو ایس فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن کے مطابق 80 فیصد سے زائد امریکی سبزی، پھل اور ڈیری مصنوعات کم جبکہ چینی، چکنائی اور سوڈیم کا زیادہ استعمال کرتے ہیں۔

اس موقع پر صدربائیڈن نے کہاکہ 2030 تک بھوک اور ناقص غذا کے باعث بیماریوں میں کمی کے لیے حکومت، نجی کمپنیوں اور معاشرےکو مل کر کام کرنے پڑے گا۔

امریکی عہدیداروں کےمطابق سرکاری اور نجی شعبے نےمل کر 8 ارب ڈالر اس معاملے میں خرچ کرنے کا وعدہ کیا ہے، جن میں اسپتال، ٹیک کمپنیاں اور فوڈ انڈسٹری کے بڑے نام شامل ہیں۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM