ایلون مسک کی دولت میں 2022 کے دوران 100 ارب ڈالرز کی کمی

ایلون مسک / اے ایف پی فوٹو
ایلون مسک / اے ایف پی فوٹو

ٹیسلا اور اسپیس ایکس کے بانی ایلون مسک 2022 کے 11 ماہ کے دوران 100 ارب ڈالرز سے محروم ہوچکے ہیں۔

بلومبرگ کی رپورٹ کے مطابق ٹوئٹر کے نئے مالک اب بھی 170 ارب ڈالرز کے اثاثوں کے ساتھ دنیا کے امیر ترین شخص ہیں۔

مگر ان کی دولت میں تیزی سے کمی آرہی ہے اور 21 نومبر کو ہی  وہ 8.59 ارب ڈالرز سے محروم ہوئے۔

ان کی کمپنی ٹیسلا کے حصص کی قیمت 2 سال کی کم ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔

ایلون مسک ٹیسلا کے 15 فیصد حصص کے مالک ہیں تو شیئرز کی قدر میں کمی سے ان کی دولت بھی متاثر ہوتی ہے۔

اقتصادی کساد بازاری، چین میں کووڈ 19 کی پابندیوں اور امریکا میں سپلائی چین کے مسائل کے باعث ٹیسلا کو مشکلات کا سامنا ہے۔

ایلون مسک نے حال ہی میں ٹوئٹر کو 44 ارب ڈالرز میں خریدا اور اس کے بعد 60 فیصد عملے کو فارغ کردیا۔

ماہرین کے مطابق اقتصادی کساد بازاری ٹیسلا کی گاڑیوں کے لیے تباہ کن ثابت ہوگی اور اس کا اثر ایلون مسک کے اثاثوں پر بھی مرتب ہوگا۔

ویسے ایلون مسک اتنے امیر ہیں کہ 11 ماہ میں 100 ارب ڈالرز سے محروم ہونے کے بعد بھی دنیا کے امیر ترین شخص ہیں۔

گزشتہ سال نومبر میں ان کے اثاثے 340 ارب ڈالرز کی ریکارڈ سطح تک پہنچ گئے تھے یعنی ان کی دولت میں ایک سال کے دوران لگ بھگ 50 فیصد کمی آئی ہے۔

دنیا کے دوسرے امیر ترین شخص برنارڈ آرنلٹ 157 ارب ڈالرز کے مالک ہیں اور ہوسکتا کہ کچھ عرصے بعد وہ ایلون مسک کو نیچے دھکیل دیں۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM