کھیل
30 نومبر ، 2022

کس ٹیم نے کب فٹبال ورلڈکپ ٹرافی جیتنے میں کامیابی حاصل کی؟

2018 میں فرانس نے ورلڈکپ جیتا تھا / رائٹرز فوٹو
2018 میں فرانس نے ورلڈکپ جیتا تھا / رائٹرز فوٹو

قطر میں فیفا ورلڈکپ کے دلچسپ مقابلوں کا سلسلہ جاری ہے۔

مگر کیا آپ کو معلوم ہے کہ 1930 سے 2018کے دوران ہونے والے ٹورنامنٹس میں کتنی ٹیموں نے کب اس ایونٹ کو جیتا؟

قطر میں 22 واں ورلڈکپ ہورہا ہے یعنی اس سے پہلے 21 بار مختلف ٹیموں نے ورلڈکپ ٹرافی اپنے نام کی۔

اس کے ساتھ ساتھ کیا آپ کو یہ معلوم ہے کہ ورلڈکپ کا وہ کونسا میچ ہے جس میں سب سے زیادہ کارڈ دکھائے گئے یا کب پہلی بار فائنل پنالٹی ککس سے مکمل ہوا؟

ایسی ہی چند دلچسپ تفصیلات جان کر آپ بھی فٹبال کے ماہر بن سکتے ہیں۔

یوروگوئے 1930 (وہ ملک جہاں ٹورنامنٹ ہوا)

پہلا فیفا فٹبال ورلڈکپ میزبان ٹیم یوروگوئے نے فائنل میں ارجنٹائن کو  شکست دے کر جیتا تھا۔

اولین ٹورنامنٹ میں 13 ٹیموں نے شرکت کی تھی جن میں سے محض 4 کا تعلق یورپ سے تھا۔

اس زمانے میں جنوبی امریکا کا سفر بیشتر یورپی کھلاڑیوں کے لیے بہت مشکل تھا کیونکہ انہیں طویل عرصے تک وطن سے دور رہنے پر ملازمتوں سے فارغ ہونے کا خطرہ تھا۔

اٹلی 1934

ایک بار پھر میزبان ملک یعنی اٹلی نے ٹورنامنٹ کو جیتا اور فائنل میں چیکو سلاوکیہ کو شکست دی۔

اس ٹورنامنٹ میں دفاعی چیمپئن یوروگوئے نے شرکت نہیں کی تھی جو اس کی جانب سے 1930 کے ورلڈکپ میں یورپی ٹیموں کی جانب سے شرکت سے انکار پر کیا جانے والا احتجاج تھا۔

مصر کی ٹیم افریقا سے تعلق رکھنے والی پہلی ٹیم بنی جس نے ورلڈکپ میں شرکت کی۔

فرانس 1938

یہ پہلا ٹورنامنٹ تھا جو میزبان ملک نے نہیں جیتا اور اس کے ساتھ ساتھ یہ پہلا ایونٹ تھا جس میں دفاعی چیمپئن نے اعزاز کا کامیابی سے دفاع کیا۔

اٹلی نے فائنل میں ہنگری کو شکست دی۔

یہ پہلا ورلڈکپ تھا جس میں ڈچ ایسٹ انڈیز (موجودہ عہد کا انڈونیشیا) کی ٹیم بھی شریک تھی اور وہ یہ اعزاز پانے والی پہلی ایشیائی ٹیم بنی۔

برازیل 1950

یہ دوسری جنگ عظیم کے بعد پہلا فٹبال ورلڈکپ تھا جس میں انگلینڈ کی ٹیم نے پہلی بار شرکت کی۔

یوروگوئے نے فائنل میں میزبان ملک برازیل کو شکست دے کر دوسری بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

فائنل دیکھنے کے لیے اسٹیڈیم میں ایک لاکھ 73 ہزار 850 افراد آئے تھے جو اب بھی ریکارڈ ہے۔

سوئٹزرلینڈ 1954

اس ٹورنامنٹ کے فائنل میں مغربی جرمنی نے ہنگری کو شکست دیکر پہلی بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

سوئیڈن 1958

اس فٹبال ورلڈکپ میں 17 سالہ پیلے نے ڈیبیو کیا اور اپنی ٹیم کو فائنل میں سوئیڈن کے خلاف کامیابی دلانے میں اہم کردار ادا کیا۔

فرانس کے کھلاڑی Just Fontaine نے ٹورنامنٹ کے دوران 13 گول اسکور کیے جو اب بھی ایک ٹورنامنٹ میں کسی کھلاڑی کی جانب سے سب سے زیادہ گولز کرنے کا ریکارڈ ہے۔

چلی 1962

برازیل نے یہ ٹورنامنٹ بھی اپنے نام کیا اور فائنل میں چیکو سلاوکیہ کو شکست دی۔

انگلینڈ 1966

یہ ورلڈکپ میزبان انگلینڈ کے نام رہا جس نے فائنل میں اضافی وقت میں مغربی جرمنی کو شکست دی۔

اس ورلڈکپ میں شمالی کوریا اور پرتگال کی ٹیموں نے ڈیبیو کیا۔

میکسیکو 1970

یہ لیجنڈ کھلاڑی پیلے کا آخری ورلڈکپ تھا اور فائنل میں برازیل نے اٹلی کو شکست دے کر تیسری بار عالمی چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

یہ پہلا ٹورنامنٹ تھا جس میں کسی کھلاڑی کو میچ سے باہر نکالا نہیں گیا جبکہ پہلی بار متبادل کھلاڑیوں کی اجازت دی گئی اور پہلی بار پیلے اور سرخ کارڈز کا استعمال ہوا۔

اسی طرح یہ پہلا ورلڈکپ تھا جس کی نشریات بلیک اینڈ وائٹ کی بجائے رنگین تھی۔

مغربی جرمنی 1974

میزبان ملک فائنل میں نیدرلینڈز کو شکست دے کر دوسری بار چیمپئن بنا۔

اس ٹورنامنٹ میں ورلڈکپ کی نئی ٹرافی متعارف کرائی گئی تھی جبکہ پرانی ٹرافی 3 بار چیمپئن بننے پر برازیل کو ہمیشہ کے لیے دے دی گئی۔

ارجنٹائن 1978

ایک بار پھر میزبان ملک ورلڈچیمئن میں کامیاب ہوا۔ نیدرلینڈز مسلسل دوسری بار فائنل میں پہنچا مگر اسے ارجنٹائن کے ہاتھوں شکست کا سامنا ہوا۔

اس ٹورنامنٹ کی ایک خاص بات تیونس کی میکسیکو کے خلاف کامیابی تھی کیونکہ یہ پہلا موقع تھا جب کسی افریقی ٹیم نے ایک ورلڈکپ میچ جیتا۔

اسپین 1982

مغربی جرمنی کو شکست دے کر اٹلی نے تیسری بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

یہ پہلا ٹورنامنٹ تھا جس میں ناک آؤٹ مرحلے میں پنالٹی شوٹ آؤٹ کو استعمال کیا گیا۔

میکسیکو 1986

یہ ٹورنامنٹ ڈیاگو میرا ڈونا کی وجہ سے جانا جاتا ہے اور ان کی بدولت ارجنٹائن نے فائنل میں مغربی جرمنی کو شکست دے کر دوسری بار ٹرافی اپنے نام کی۔

مگر ٹورنامنٹ کے فائنل کی بجائے ارجنٹائن اور انگلینڈ کے درمیان کوارٹر فائنل زیادہ یادگار ہے جس میں پہلے ہینڈ آف گاڈ گول ہوا اور پھر میرا ڈونا نے صدی کا بہترین گول کیا۔

اٹلی 1990

اس ٹورنامنٹ کے فائنل میں مغربی جرمنی نے ارجنٹائن کو شکست دے کر تیسری بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

امریکا 1994

یہ پہلا ٹورنامنٹ تھا جو امریکا میں ہوا اور اٹلی کو شکست دے کر برازیل چوتھی بار چیمپئن بنا۔

یہ ورلڈکپ کی تاریخ کا پہلا فائنل تھا جس کا فیصلہ پنالٹی ککس پر ہوا۔

فرانس 1998

یہ 32 ٹیموں پر مشتمل پہلا ورلڈکپ تھا اور میزبان ملک فرانس نے برازیل کو شکست دے کر پہلی بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

جنوبی کوریا اور جاپان 2002

یہ ایشیا میں ہونے والا پہلا ورلڈکپ تھا اور یہ پہلا موقع تھا جب 2 ممالک نے مشترکہ میزبانی کی۔

اس ٹورنامنٹ میں برازیل نے جرمنی کو شکست دے کر 5 ویں بار ٹرافی کو اپنے نام کیا۔

جرمنی 2006

ایک بار پھر ورلڈکپ چیمپئن بننے کا فیصلہ پنالٹی ککس پر ہوا اور اٹلی نے فرانس کو شکست دے کر چوتھی بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

فائنل میں زیدان نے اطالوی کھلاڑی کو سر سے ٹکر ماری جس کے باعث انہیں ریڈکارڈ دکھا کر باہر کردیا گیا۔

اس ورلڈکپ کے پری کوارٹر فائنل مرحلے میں پرتگال اور نیدرلینڈز کے درمیان ہونے والے میچ کو the battle of Nuremberg کا نام دیا گیا۔

اس میچ میں ریفری نے 4 سرخ اور 16 پیلے کارڈز دکھائے جو فیفا کے کسی بین الاقوامی ٹورنامنٹ میں کارڈز دکھانے کی ریکارڈ تعداد ہے۔

جنوبی افریقا 2010

پہلی بار ورلڈکپ کا انعقاد براعظم افریقا میں ہوا جس کے فائنل میں اسپین نے اضافی وقت میں ایک گول کرکے نیدرلینڈز کو شکست دی۔

برازیل 2014

اس ٹورنامنٹ کے فائنل میں جرمنی نے ارجنٹائن کو شکست دی اور چوتھی بار چیمپئن بننے کا اعزاز حاصل کیا۔

روس 2018

فائنل میں کروشیا کو شکست دے کر فرانس دوسری بار عالمی چیمپئن بنا۔

یہ پہلا ٹورنامنٹ تھا جس میں ویڈیو اسسٹنٹ ریفریز کا استعمال کیا گیا۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM