Can't connect right now! retry

پاکستان
28 جولائی ، 2018

پنجاب میں حکومت سازی: چار آزاد امیدوار تحریک انصاف میں شامل


پنجاب میں حکومت سازی کے لیے ن لیگ اور تحریک انصاف میں رسہ کشی کا سلسلہ جاری ہے جب کہ پی ٹی آئی نے آزاد امیدواروں سے رابطے تیز کردیئے اور  چار  آزاد امیدواروں نے عمران خان کا ساتھ دینے کا اعلان کر دیا ہے۔

پنجاب میں کس کے نام کا سکہ چلے گا،کون تخت لاہور پر بیٹھے گا، حکمرانی کی بساط پر مسلم لیگ ن اور تحریک انصاف آمنے سامنے آگئے، نمبر گیم کی چالوں سے مد مقابل کو زچ کرنے کی بازی شروع ہو چکی ہے۔

دونوں سیاسی جماعتوں کی جانب سے حکومت بنانے کے لیے دعوے اور جوڑ توڑ عروج پر پہنچ گئے ہیں ، آزاد اراکین سے رابطے شروع کردیے گئے ہیں۔

پنجاب اسمبلی کے چار آزاد اراکین تحریک انصاف میں شامل ہو گئے ہیں جس کے بعد صوبائی اسمبلی میں پی ٹی آئی کی نشستوں کی تعداد بڑھ کر 127 ہو گئی ہے۔

آزاد حیثیت میں پنجاب اسمبلی کے الیکشن جیتنے والے 4 اراکین نے بنی گالہ میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سے ملاقات کے بعد پی ٹی آئی میں شمولیت کا اعلان کیا۔

تحریک انصاف میں شامل ہونے والوں میں کبیر والہ کے حسین جہانیاں گردیزی، ڈیرہ غازی خان کے حنیف خان پتافی اور لیہ سے سید رفاقت حسین اور بشارت حسین رندھاوا شامل ہیں۔

تحریک انصاف میں شامل ہونے والے رہنماوں کا کہنا تھا کہ ن لیگ کی جانب سے پیسوں اور وزارت کی پیش کش کی گئی لیکن ہمارا خیال ہے کہ جو عوام کے لیے بہتر ہے ہمیں وہ کرنا چاہیے۔

بشارت رندھاوا کا کہنا تھا کہ الیکشن سے 7 روز پہلے تک تحریک انصاف کا ضلعی صدر تھا لیکن مجھ سے ٹکٹ لے کر جنوبی پنجاب صوبہ محاذ کے ایک کرپٹ شخص کو ٹکٹ دے دیا گیا۔

ان کا کہنا تحا کہ عوام نے بھی کرپٹ لوگوں کو مسترد کیا اور مجھے کامیاب کیا۔

بشارت رندھاوا کا کہنا تھا کہ مجھے ن لیگ نے ٹکٹ کی آفر بھی کی لیکن ہم کرپشن کے خلاف جنگ لڑ رہے تھے، ہم عمران خان کے سپاہی تھے اور ہیں کوئی بکاو مال نہیں ہیں۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے نتائج کے مطابق ن لیگ129 نشستوں کے ساتھ پہلے نمبر پر ہے جبکہ تحریک انصاف کا 123 نشستوں کے ساتھ دوسرا نمبر  ہے۔

چار آزاد امیدواروں کے تحریک انصاف میں شامل ہونے کے بعد پنجاب اسمبلی میں تحریک انصاف کے اراکین کی تعداد 127 ہو گئی ہے۔

پنجاب میں حکومت بننے کی صورت میں ن لیگ کی جانب سے حمزہ شہباز کو وزارت اعلیٰ کیلئے میدان میں اتارنے جانے کا امکان ہے۔

شہباز شریف نے خبردار کردیا ہے کہ اگر ن لیگ کو حکومت بنانے سے روکا گیا تو بھرپور جواب دیا جائے گا ۔







دوسری جانب تحریک انصاف کے ترجمان فواد چوہدری کہتے ہیں کہ حکومت بنانے کے لیے 130 ارکان ہمارے پاس موجود ہیں ، حکومت تحریک انصاف ہی بنائے گی۔

جہانگیر ترین اور علیم خان کی پنجاب آمد

علاوہ ازیں تحریک انصاف نے آزاد امیدواروں سے رابطے تیز کردیئے ہیں، جہانگیر ترین اور علیم خان گزشتہ رات خصوصی طیارے کے ذریعے ملتان پہنچے جہاں انہوں نے شاہ محمود قریشی کو شکست دینے والے امیدوار سلمان نعیم سے ملاقات کی اور انہیں پی ٹی آئی میں شمولیت کی دعوت دی۔

اس کے علاوہ دونوں رہنماؤں نے خانیوال، ڈیرہ غازی خان اور لیہ سے کامیاب ہونے والے آزاد امیدواروں سے بھی ملاقاتیں کیں، تمام امیدواروں نے پی ٹی آئی رہنماؤں کو ان کی جماعت میں شمولیت کی یقین دہانی کرائی ہے۔

ذرائع کےمطابق بعض امیدوار رات کو ہی جہانگیر ترین اور علیم خان کے ساتھ خصوصی طیارے کے ذریعے اسلام آباد پہنچے ہیں جب کہ سلمان نعیم آج اسلام آباد پہنچیں گے، تمام امیدوار چیئرمین تحریک انصاف عمران خان سےملاقات کریں گے اور پی ٹی آئی میں باقاعدہ شمولیت کا بھی اعلان کریں گے۔

حمزہ شہباز کا اعلان

حمزہ شہباز نے تحریک انصاف کو 2013 میں خیبر پختونخوا کی اکثریت یاد دلاتے ہوئے خبردار کیا کہ ہم نے اس وقت جمہوری روایات کی پاسداری کی تھی اب تمہاری باری ہے، اگر حکومت بنانے سے روکا گیا تو بھرپور جواب دیا جائے گا۔

پنجاب اسمبلی کا نمبر گیم

اگر تحریک انصاف کے 123 ارکان کے ساتھ ق لیگ کے 7 اور 28 آزاد ارکان مل جائیں تو سیاسی شطرنج کی بساط پرتحریک انصاف بظاہر ن لیگ کو شہ مات دیتی نظر آرہی ہے۔

ن لیگ پنجاب کی کل 297 نشستوں میں سے 129 نشستوں کے ساتھ پنجاب کی سب سے بڑی پارٹی ہے تاہم حکومت سازی کے لیے 149 کا جادوئی ہندسہ حاصل کرنا ہوگا۔

اب انتظار ن لیگ کا ہے کہ وہ ہارتی ہوئی بازی جیت کر بازی گر بنے گی،یا شکست کا ہار اپنے گلے میں ڈالے گی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM