Can't connect right now! retry

پاکستان
03 اگست ، 2020

جو جانوروں کا خیال نہیں رکھ سکتے وہ انسانوں کا کیا خیال رکھیں گے: جسٹس اطہر من اللہ

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس  اطہرمن اللہ نے چڑیا گھر میں شیر اور شیرنی سمیت دیگر جانورون کی ہلاکت سے متعلق کیس میں وفاقی حکومت پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیے کہ جو جانوروں کا خیال نہیں رکھ سکتے وہ انسانوں کا کیا خیال رکھیں گے؟

اسلام آباد ہائیکورٹ  میں چیف جسٹس اطہرمن اللہ کی سربراہی میں مرعزار چڑیا گھر سے جانوروں کی منتقلی کے دوران شیر اور شیرنی سمیت دیگر جانوروں کی ہلاکت سے کیس پر سماعت ہوئی۔

اس دوران درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ چڑیا گھر سے شیر کو لاہور منتقل کیا جا رہا تھا تو وہ ہلاک ہوگیا۔

چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے  ریمارکس دیے کہ یہ سب وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ کی نااہلی ہے، عدالت نے فیصلے میں پہلے ہی لکھ دیا تھا کہ جانوروں کو کچھ ہوا تو کون ذمہ دار ہو گا، عدالت کو احساس تھا کہ یہ ہونے جا رہا ہے۔

چیف جسٹس نے حکومتی نمائندوں سے استفسار کیا کہ کیا آپ نے چڑیا گھر سے متعلق اس عدالت کا فیصلہ پڑھا ہے؟ جسٹس اطہر من اللہ نے ڈپٹی اٹارنی جنرل طیب شاہ کو چڑیا گھر سے متعلق فیصلہ پڑھنے کی ہدایت دی۔

بعدازاں چیف جسٹس نے سوال کیا کہ وزارت ماحولیاتی تبدیلی کی طرف سے کون آیا ہے، ماحولیاتی تبدیلی کی وزیر تو زرتاج گل ہیں، وفاقی حکومت نے بھی نوٹیفکیشن دیا تھا کہ بورڈ میں کون ہوگا مگر کوئی نظر نہیں آیا کیوں نہ ان تمام ممبران کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کی جائے۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ان تمام ممبران نے اس عدالت کے فیصلے کی توہین کی، کیا ان تمام ممبران کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی؟

جسٹس اطہر من اللہ نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وزارت ماحولیاتی تبدیلی، ایم سی آئی اور سی ڈی اے سب سیاست کر رہے ہیں، سب کریڈٹ لینے کو تیار  ہیں مگر کوئی بھی ذمہ داری لینے کے لیے تیار نہیں تھا۔

انہوں نے ریمارکس دیے کہ جو جانوروں کا خیال نہیں رکھ سکتے وہ انسانوں کا کیا خیال رکھیں گے؟ وفاقی حکومت اس عمل سے بے نقاب ہوئی ہے۔

 چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ چڑیا گھر میں جانوروں کی ہلاکت کی انکوائری کون کر رہا ہے؟ جن کی نااہلی سے جانور ہلاک ہوئے کیا وہی انکوائری بھی کر رہے ہیں؟

بعدازاں عدالت نے کیس کی مزید سماعت کل تک ملتوی کرتے ہوئے سیکرٹری وزارت موسمیاتی تبدیلی اور چیئرمین وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ کو کل ذاتی حیثیت میں طلب کر لیا۔

اس کے علاوہ عدالت نے کارروائی کے لیے وائلڈ لائف مینجمنٹ بورڈ اور دیگر عہدیداروں کے نام بھی طلب کر لیے ہیں۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM