Can't connect right now! retry

پروین رحمان قتل: سپریم کورٹ کا ٹرائل ایک ماہ میں مکمل کرکے فیصلہ سنانے کا حکم

سپریم کورٹ نے ٹرائل کورٹ کو پروین رحمان کیس کا فیصلہ ایک ماہ میں سنانے کا حکم دے دیا۔

سپریم کورٹ کے جج جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے بنچ نے  پروین رحمان قتل کیس کی سماعت کی۔

جسٹس عمر عطابندیال کا کہنا تھا کہ یہ حیرانی کی بات ہے کہ گزشتہ 20ماہ سے ٹرائل تعطل کا شکار ہے، ملزمان بھی گرفتار ہیں کیس کا ٹرائل مکمل کیوں نہیں ہورہا؟

اس پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کے سربراہ پیر محمد شاہ نےکہا کہ شہادتیں اور بیانات مکمل ہو چکے، مقدمہ سپریم کورٹ میں ہونے کی وجہ سے کیس حتمی دلائل کے لیے رکا ہوا ہے۔

وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کے وکیل نےکہا کہ اس کیس میں پانچ ملزمان تھے ایک ملزم قاری بلال کو اسی شام قتل کر دیا گیا تھا، قاری بلال کا کیس سے کوئی تعلق نہیں تھا۔

اس پر جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی نے ریمارکس دیے کہ اگر کوئی تعلق نہیں تھا تو واردات میں استعمال ہونے والا اسلحہ کیسے میچ کر گیا؟

جسٹس عمر عطابندیال نےکہا کہ سپریم کورٹ نے کوئی حکم امتناع نہیں جاری کررکھا، ایک ماہ میں ٹرائل مکمل کیاجائے ۔

واضح رہے کہ اورنگی پائلٹ پراجیکٹ کی ڈائریکٹر پروین رحمان کو 13 مارچ 2013 کو کراچی میں بنارس پل پر عبداللہ کالج کے قریب فائرنگ کرکے قتل کیا گیا تھا۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM