کراچی دھماکا: دہشتگرد سائیکل کچرا کنڈی کے قریب کھڑی کر کے ہوٹل پر بیٹھ گیا

کراچی کے علاقے صدر میں گزشتہ روز ہونے والے سائیکل بم دھماکے کی تحقیقات میں حیران کن انکشافات سامنے آئے ہیں۔

تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ دھماکے میں ایک سے زائد کالعدم تنظیمیں ملوث ہوسکتی ہیں،غیرملکی ایجنسیز کا ملوث ہونا بھی خارج  از امکان نہیں، دھماکا خیز مواد مقامی لیکن طاقتور نوعیت کا تھا، ڈھائی کلوگرام کے بم میں دھماکا خیز مواد اور  بال بیئرنگز  تھے، ہوسکتا ہے کہ  بم کسی اور کالعدم تنظیم نے تیار کیا ہو۔

تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ ایسے سائیکل بم بلوچستان میں کالعدم قوم پرست تنظیمیں استعمال کرتی ہیں، ابتدائی تحقیق کے مطابق دہشتگرد پاسپورٹ آفس کی جانب سے سائیکل بم لایا، سائیکل کچرا کنڈی کے قریب کھڑی کر کے دہشت گرد ہوٹل پر  بیٹھ گیا۔

تفتیشی حکام کے مطابق کوسٹ گارڈز کی گاڑی آنے پر اس نے ریموٹ کنٹرول سے بم دھماکا کیا، دھماکا کرنے کے بعد دہشت گرد چائے کے ہوٹل سے پیچھے کی طرف سے فرار ہوگیا ۔

تفتیشی حکام کے مطابق سی سی ٹی وی فوٹیج قانون نافذ کرنے والے ادارے نے قبضے  میں لے لی ہیں۔

سی سی ٹی وی ویڈیو میں دھماکا کرنے والےکو دیکھا جاسکتاہے، دھماکا کرنے والا ایک نوجوان ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ شب ہونے والے دھماکے میں ایک شخص جاں بحق اور 13 کے قریب زخمی ہوئے تھے۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM