دنیا
17 جون ، 2022

گلیشیئر پگھلنے پر نیپال کا ماؤنٹ ایورسٹ کا بیس کیمپ منتقل کرنے کا فیصلہ

ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ کا ایک منظر / رائٹرز فوٹو
ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ کا ایک منظر / رائٹرز فوٹو

موسمیاتی تبدیلیوں اور انسانی سرگرمیوں نے نیپال کو دنیا کی بلند ترین چوٹی ماؤنٹ ایورسٹ کے بیس کیمپ کا مقام بدلنے کے فیصلے پر مجبور کردیا ہے۔

نیپال اور چین کی سرحد پر واقع ماؤنٹ ایورسٹ کے دونوں ممالک میں الگ الگ بیس کیمپس ہیں۔

دونوں میں سے نیپال میں موجود بیس کیمپ کوہ پیماؤں میں زیادہ مقبول ہے جو ایک گلیشیئر کھمبو میں واقع ہے، جہاں ہر سال سیکڑوں افراد آتے ہیں۔

اب موسمیاتی تبدیلیوں اور انسانی سرگرمیوں کے نتیجے میں یہ گلیشیئر بہت تیزی سے پگھل رہا ہے۔

نیپالی حکام اس بیس کیمپ کو 400 میٹر نیچے منتقل کرنے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں۔

نیپال کے محکمہ سیاحت کے ڈائریکٹر تارا ناتھ ادھیکاری نے بتایا کہ ہم ماؤنٹ ایورسٹ پر موجود برف کو بچانا چاہتے ہیں۔

حکومت کی جانب سے نئے اور محفوظ مقام کی تلاش کے لیے ماہرین ماحولیات، کوہ پیماؤں اور مقامی افراد سے مشاورت بھی شروع کردی گئی ہے۔

تارا ناتھ نے بتایا کہ انہیں نہیں لگتا کہ بیس کیمپ نیچے منتقل کرنے سے کوہ پیماؤں کو چوٹی سر کرنے میں مشکلات کا سامنا ہوگا۔

مگر اس بیس کیمپ کو منتقل کرنے میں ابھی کچھ وقت لگ سکتا ہے / اسکرین شاٹ
مگر اس بیس کیمپ کو منتقل کرنے میں ابھی کچھ وقت لگ سکتا ہے / اسکرین شاٹ

ان کا کہنا تھا کہ اس سے چوٹی سر کرنا مشکل نہیں ہوگا بلکہ کوہ پیماؤں اور ماؤنٹ ایورسٹ کے ماحول کو  زیادہ تحفظ ملے گا۔

مگر انہوں نے کہا کہ بیس کیمپ کی منتقلی جلد ممکن نہیں۔

ایورسٹ بیس کیمپ کے منیجر شیرنگ ٹینزنگ شیرپا کے مطابق بیس کیمپ کو منتقل کرنے میں چند سال لگ سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ موسمیاتی تبدیلیوں کے باعث گلیشیئر تیزی سے پگھل رہے ہیں مگر بیس کیمپ محفوظ ہے اور ہمیں نہیں لگتا کہ چند سال تک اسے بدلنے کی ضرورت ہوگی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM