کھیل
28 جون ، 2022

عاقب جاوید نے ڈراپ ان پچز کا آئیڈیا فضول قرار دے دیا

ڈراپ ان پچز وہاں استعمال کی جاتی ہیں جہاں سردیوں اور گرمیوں دونوں موسم میں الگ الگ اسپورٹس ہو: سابق کرکٹر—فوٹو فائل
 ڈراپ ان پچز وہاں استعمال کی جاتی ہیں جہاں سردیوں اور گرمیوں دونوں موسم میں الگ الگ اسپورٹس ہو: سابق کرکٹر—فوٹو فائل

سابق ٹیسٹ کرکٹر عاقب جاوید کا کہنا ہے کہ ڈراپ ان پچز کا آئیڈیا شروع دن سے فضول قراردیا تھا،  جب چیئرمین رمیز راجا نے ڈراپ ان پچز کا کہا تھا میں نے تبھی کہہ دیا تھا کہ اس کا فائدہ نہیں ، اب خود ہی ڈراپ ان پچز کی بجائے آسٹریلیا سے مٹی منگوانے کی بات ہو رہی ہے۔

جیو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے عاقب جاوید کا کہنا تھا کہ میں سمجھتا ہوں آسٹریلیا سے مٹی منگوانے کا بھی زیادہ فائدہ نہیں ہوگا یہ لمبا عرصہ کار آمد نہیں ہوتی، مٹی کو باربار منگواتے رہنا پڑے گا یہ نہیں ہے کہ ایک بار مٹی منگوالی تو وہ سالہاسال چلےگی، موسم کا بھی مٹی پر اثر پڑتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ڈراپ ان پچز وہاں استعمال کی جاتی ہیں جہاں سردی اور گرمی دونوں موسم میں الگ الگ اسپورٹس ہو،  آسٹریلیا نیوزی لینڈ اور جنوبی افریقا میں چھ چھ ماہ الگ الگ اسپورٹس ہوتے ہیں وہاں کی سردیوں میں رگبی ، فٹ بال اور فٹی ہوتی ہے جب کہ ان کی گرمیوں میں کرکٹ ہوتی ہے۔

عاقب جاوید کا کہنا تھا کہ پاکستان میں ایک گراؤنڈ میں چھ ماہ صرف کرکٹ ہوتی ہے اس لیے یہاں ڈراپ ان پچز کا آئیڈیا کامیاب ہو ہی نہیں سکتا۔

پاکستان جونیئر لیگ کون دیکھے گا ؟

لاہور قلندرز کے ڈائریکٹرکرکٹ آپریشنز عاقب جاوید نےکہا کہ ٹی ٹوئنٹی فارمیٹ کا انڈر 19ٹورنامنٹ پی ایس ایل کی طرز پرکرانےکی کوشش کی جارہی ہے، لیگ کرانےکا مقصد پراڈکٹ کو بیچ کر منافع کمانا اور ڈویلپمنٹ پر لگانا ہے لیکن سوچنے کی بات یہ ہے کہ انڈر 19 لیگ کون دیکھےگا اور یہ لیگ کیسےکامیاب ہو گی؟

انہوں نے کہا کہ ایک طرف چیئرمین رمیز راجا کہتے ہیں پی ایس ایل میں بڑے نام آنے چاہئیں تاکہ زیادہ مقبول ہو،لیکن انڈر 19 لیگ میں تو بڑے نام نہیں ہوں گے تو کیسے کامیاب ہو گی؟ کون دیکھے گا؟ کیسے پیسا آئے گا؟ لیگز میں لوگ بابر، شاہین، فخر اور باہر سے آنے والوں کو دیکھنا چاہتے ہیں۔

عاقب جاوید نے کہا کہ میرے خیال میں انڈر19 لیگ کی بجائے پی ایس ایل فرنچائزز کو کہیں کہ وہ ڈویلپمنٹ اسکواڈز بنائیں،لاہور قلندرز نے ڈویلپمنٹ پروگرام کیا اس کا لاہور قلندرز کو فائدہ ہوا اور پاکستان کو بھی۔

انہوں نے کہا کہ کرکٹ کی ڈویلپمنٹ دنیا بھر میں ایج گروپ میں طویل دورانیےکی کرکٹ سے کی جاتی ہے،بھارت اور سری لنکا کے بیٹرز اس لیے اچھے آتے ہیں کہ وہاں اسکول کرکٹ تین روزہ ہے، نوجوانوں میں مہارت کو پختہ کرنے کے لیے طویل دورانیے کی کرکٹ درکار  ہے۔

" بھارت معاملات کنٹرول کرےگا ، پی ایس ایل کو محفوظ بنائیں "

سابق فاسٹ بولر عاقب جاوید کا ماننا ہےکہ بھارت کے پاس پیسا ہے اور وہ پیسے کے ساتھ معاملات بھی کنٹرول کرے گا،ماضی میں انگلینڈ اور آسٹریلیا معاملات کنٹرول کرتے تھے اب بھارت کرے گا،  بھارت اپنی لیگ کی مدت بڑھا لے گا اسے کوئی نہیں روکے گا لیکن انٹرنیشنل کرکٹ کے لیے اچھا نہیں۔

انہوں نے کہا کہ بھارت اتنے پیسے دے دیتا ہے کہ انٹرنیشنل کھلاڑیوں کی باقی لیگز میں دلچسپی ہی نہیں ہوتی، وہ دوسری لیگز میں آتے ہیں وقت گزارتے ہیں اور چلے جاتے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ مجھے دبئی میں ہونے والی لیگ سے بھی بڑا خطرہ نظر آ رہا ہے،دبئی کی لیگ میں بھی بھارتی سرمایہ کار ہیں، ہمیں سوچنا ہوگا ہم نے پی ایس ایل کو کیسے محفوظ بنانا ہے۔

عاقب جاوید نے کہا کہ اپنی لیگ جو ابھی سانسیں لینا شروع ہوئی ہے یہ سوچیں ہم نے اسے کیسے آگے لے کر چلنا ہے۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM