جسٹس مظاہر نقوی کو دوبارہ شوکاز جاری، جوڈیشل کونسل نے 14 روز میں جواب طلب کرلیا

کونسل نے مسلسل 3 دن جسٹس مظاہرنقوی کے خلاف شکایات اور ان کے اعتراضات کا جائزہ لیا، ذرائع— فوٹو:فائل
کونسل نے مسلسل 3 دن جسٹس مظاہرنقوی کے خلاف شکایات اور ان کے اعتراضات کا جائزہ لیا، ذرائع— فوٹو:فائل

سپریم جوڈیشل کونسل نے سپریم کورٹ کے جسٹس مظاہر نقوی کو دوبارہ شوکاز نوٹس جاری کردیا۔

سپریم جوڈیشل کونسل کا اجلاس چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی زیر صدارت ہوا جس میں جسٹس مظاہر نقوی کے خلاف شکایات کا جائزہ لیا گیا۔

ذرائع کے مطابق اجلاس میں سامنے آئے شواہد کی روشنی میں جسٹس مظاہر نقوی کو نوٹس جاری کیا گیا۔

سپریم جوڈیشل کونسل  نے شوکاز میں کہا ہے کہ جسٹس مظاہر نقوی 14 روز کے اندر اظہار وجوہ نوٹس کا جواب دیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ سپریم جوڈیشل کونسل نے تفصیلی شوکاز جاری کیا لیکن تفصیلی شوکاز سے جسٹس اعجاز الاحسن نے اختلاف کیا، شوکاز میں 10 معاملات پر جسٹس مظاہر نقوی سے وضاحت مانگی گئی ہے۔

ذرائع نے بتایاکہ جسٹس مظاہر نقوی کو شوکازچار ایک کے تناسب سےجاری کیا گیا، چیف جسٹس قاضی فائزعیسٰی، جسٹس سردارطارق، جسٹس امیر بھٹی اور جسٹس نعیم افغان نے شوکاز جاری کرنے کی حمایت کی، صرف جسٹس اعجازالاحسن نے جسٹس مظاہر نقوی کو شوکاز جاری کرنے کی مخالفت کی۔

ذرائع کے مطابق جسٹس مظاہر نقوی نے شوکاز میں اپنےخلاف شکایات کی تفصیل درج نہ ہونے پر اعتراض کیاتھا، کونسل نے مسلسل 3 دن جسٹس مظاہرنقوی کے خلاف شکایات اور ان کے اعتراضات کا جائزہ لیا۔

جسٹس مظاہر نقوی کو27 اکتوبر کے کونسل اجلاس میں بھی شوکازجاری کیاگیا تھا۔

مزید خبریں :