Can't connect right now! retry

پرویز مشرف نے سزائے موت کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا

سابق صدر پرویزمشرف نے خصوصی عدالت سے سزائے موت سنائے جانے کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج کردیا۔

جنرل (ر) پرویز مشرف نے اپیل میں مؤقف اپنایا ہے کہ انہیں شفاف ٹرائل کا حق نہیں دیا گیا، خصوصی عدالت کی تشکیل بھی غیرآئینی تھی، اس کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جائے۔

سابق صدرپرویزمشرف نے اسلام آباد کی خصوصی عدالت کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ سے رجوع کرلیا اور خصوصی عدالت کی جانب سے سزائے موت کا فیصلہ کالعدم قراردینے کی استدعا کردی۔

پرویز مشرف کی جانب سے 65 صفحات پر مشتمل اپیل سلمان صفدر ایڈووکیٹ نے سپریم کورٹ میں دائرکی۔

اپیل میں وفاق اور خصوصی عدالت کو فریق بنایا گیا ہے۔ پرویز مشرف نے مؤقف اپنایا ہے کہ ان کے خلاف آرٹیکل 6 کے تحت سنگین غداری کیس کا مقدمہ بناتے وقت کابینہ سے منظوری بھی نہیں لی گئی، اس لیے خصوصی عدالت کا قیام ہی غیر آئینی وغیر قانونی تھا۔

خیال رہے کہ اسلام آباد کی خصوصی عدالت کے 3 رکنی بینچ نے 17 دسمبر 2019 کو پرویز مشرف کو سنگین غداری کیس میں سزائے موت سنائی تھی۔

بینچ کے دو اراکین نے فیصلے کی حمایت جب کہ ایک رکن نے اس کی مخالفت کرتے ہوئے پرویز مشرف کو بری کیا تھا۔

خصوصی عدالت نے اپنے فیصلے میں پرویز مشرف کو بیرون ملک بھگانے والے تمام سہولت کاروں کو بھی قانون کےکٹہرے میں لانے کا حکم دیا اور فیصلے میں اپنی رائے دیتے ہوئے جسٹس وقار سیٹھ نے پیرا 66 میں لکھا ہے کہ پھانسی سے قبل پرویز مشرف فوت ہوجائیں تو لاش کو ڈی چوک پر لاکر 3 دن تک لٹکایا جائے۔

تاہم 13 جنوری 2020 کو لاہور ہائیکورٹ نے سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کو سزائے موت کا فیصلہ سنانے والی خصوصی عدالت کی تشکیل ہی غیرآئینی قرار دے دی تھی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM