دنیا
04 مئی ، 2020

امریکی سپریم کورٹ میں تاریخ میں پہلی بار ٹیلی فون کے ذریعے دلائل سنے جائیں گے

امریکی سپریم کورٹ نے تاریخ میں پہلی مرتبہ ٹیلی فون کے ذریعے دلائل سننے کا فیصلہ کیا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی سپریم کورٹ کی جانب سے کورونا وبا کے پیش نظر ٹیلی فون کے ذریعے دلائل سننے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

امریکی سپریم کورٹ میں ٹیلی فون کے ذریعے کیسز کی سماعت آج سے شروع ہو گی اور ہفتے میں عدالت صرف 10 کیسز کی سماعت کرے گی، اس طرح سماعت کے دوران سینیارٹی رول اپنایا جائے گا۔

جج سینیارٹی کے لحاظ سے سوالات پوچھیں گے، چیف جسٹس جان رابرٹس پہلے اور جسٹس بریٹ کاونوف آخر میں بات کریں گے جب کہ ججز کی آمد سے 5 منٹ پہلے اور ان کی آمد کے وقت بجائی جانے والی بزر  بھی خاموش رہے گی۔

وکلاء کو مقامی وقت کے مطابق صبح 9:30 پر کال موصول ہو گی جب کہ کال دلائل کے آغاز سے 30 منٹ پہلے کی جائے گی، صبح 10 بجے کورٹ آرڈر پڑھا جائے گا۔

خیال رہے کہ  1935 میں امریکی سپریم کورٹ کی عمارت کے افتتاح کے بعد دوسرا موقع ہو گا جب ججز  عدالت سے باہر ملیں گے۔ 

اس سے قبل 2001 میں عدالت کے میل روم میں انتھراکس ملنے پر عارضی طور پر جگہ تبدیل کی گئی تھی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM