Can't connect right now! retry

دنیا
04 جون ، 2020

امریکا: سیاہ فام شخص کی ہلاکت میں ملوث مزید 3 پولیس اہلکاروں کیخلاف کارروائی کا فیصلہ

امریکا میں سیاہ فام شہری جارج فلوئیڈ کے قتل پر ہنگاموں میں شدت آگئی، پورٹ لینڈ میں کرفیو کے باوجود سیکڑوں شہری احتجاج کے لیے نکل آئے۔

ادھر ریاست نیو یارک میں مظاہرے کی وڈیو بنانے والے سائیکل سوار پر پولیس نے تشدد کیا، 3 اہلکاروں نے لاٹھیوں سے مارا۔

واشنگٹن میں کانگریس کی عمارت کے سامنے بھی مظاہرہ جاری ہے۔ بڑھتے ہوئے احتجاج کے پیش نظر انتظامیہ نے جارج فلوئیڈ کی ہلاکت میں ملوث مزید 3 برطرف پولیس اہلکاروں کیخلاف بھی پرچہ کٹانے کا فیصلہ کیا ہے۔

فلوئیڈ کی گردن پر گھٹنا رکھنے والے سفید فام پولیس اہلکار کے خلاف مقدمے میں مزید سنگین نوعیت کے الزامات کی دفعات شامل کردی گئی ہیں۔

امریکی وزیر دفاع اپنے ہی صدر کیخلاف بول پڑے

دوسری جانب امریکا کے وزیر دفاع مارک ایسپر اپنے ہی صدر کے فیصلے کے خلاف بول پڑے۔ مارک ایسپر نے کہا کہ مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے فوج بلانے کی ضرورت نہیں تھی۔

سابق وزیر دفاع جیمز میٹس نے بھی صدر ٹرمپ کے اقدامات کو نازی جرمنوں کے اقدامات سے ملادیا اور کہا کہ ٹرمپ امریکی عوام کو تقسیم کر رہے ہیں، فوج بلا کر شہریوں کے آئینی حقوق پامال کیے گئے۔

سابق صدر براک اوباما نے ایک ریلی سے آن لائن خطاب کیا اور سیاسی ایکشن لینے اور تمام میئر سے پولیس اصلاحات پر زور دینے کا مطالبہ کیا۔

خیال رہے کہ امریکی ریاست منی سوٹا کے شہر مینی پولِس میں 25 مئی 2020 کو سفید فام پولیس اہلکار کے ہاتھوں 45 سالہ سیاہ فام شہری جارج فلوئیڈ ہلاک ہوگیا تھا جس کے بعد سے امریکا کی مختلف ریاستوں میں ہنگامے اور فسادات جاری ہیں۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM