Can't connect right now! retry

'آپ دونوں تو وزیراعظم بننا چاہتے ہیں اس میں کیا شک ہے'، کابینہ اجلاس کی اندرونی کہانی

وفاقی کابینہ کے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی جس کے مطابق کابینہ میں بھی وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری کے انٹرویو پر گرما گرم بحث ہوئی ہے۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم کی سربراہی میں وفاقی کابینہ کے اجلاس میں  فواد چوہدری کے غیر ملکی نشریاتی ادارے کو دیے گئے انٹرویو پر وفاقی وزراء اسد عمر اور شاہ محمود نے اعتراض اٹھایا اور احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ فواد چوہدری نے انتہائی غیر ذمہ داری دکھائی ہے۔

اس پر فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ پہلے پورا انٹرویو سُن لیں، انٹرویو کے دوران سہیل وڑائچ نے تجزیے کے لیے کہا تھا، یہ میرا تجزیہ ہے کہ جہانگیر ترین، اسد عمر اور شاہ محمود قریشی کی لڑائی نے تحریک انصاف میں سیاسی عناصر کو نقصان پہنچایا۔

اس موقع پر وزیراعظم عمران خان نے فواد چوہدری کو مزید بات کرنے سے روک دیا اور کہا کابینہ ارکان گفتگو میں احتیاط اور اتحاد قائم رکھیں۔

 دوران اجلاس ایک موقع پر وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا بھی اسد عمر اور شاہ محمود قریشی پر برس پڑے۔

فیصل واوڈا کا کہنا تھا کہ  آپ دونوں تو وزیر اعظم بننا چاہتے ہیں، اس میں کیا شک ہے؟ آپ کی لڑائی سے حکومت کا نقصان ہوا ہے۔

انہوں نے ساتھی وزراء پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کابینہ میں 'سب اچھا 'کی رپورٹ دی جاتی ہے جب کہ کارکردگی کچھ اور ہے۔

 وزیراعظم نے فیصل واوڈا کو بھی مزید بات کرنے سے روک دیا اور وزراء کو 6 ماہ میں کارکردگی بہتر بنانے کا الٹی میٹم دے دیا۔ 

رپورٹ کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے مشیران اور معاونین خصوصی سے دہری شہریت کی تفصیلات بھی مانگ لی ہیں۔

’ جہانگیر ترین اور اسد عمر کے درمیان رسہ کشی کا انکشاف ‘

خیال رہے کہ ایک حالیہ انٹرویو میں فواد چوہدری نے جہانگیر ترین اور اسد عمر کے درمیان رسہ کشی کا انکشاف کیا ہے اور بتایا ہے کہ اسد عمر کی وزارت جانےکے پیچھے کس کا ہاتھ تھا، پہلے جہانگیر ترین نے اسد عمر کو نکلوایا اور پھر اسد عمر نے جہانگیر ترین کی چھٹی کرادی۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ جب پی ٹی آئی حکومت بنی تو جہانگیر ترین ،اسد عمر اور شاہ محمود قریشی کے اختلافات اتنے بڑھ گئے کہ پولیٹیکل کلاس سارے کھیل سے ہی باہر ہوگئی اور بیوروکریٹس نے جگہ لے لی، جن لوگوں نے یہ خلا پُر کیا وہ سیاست سے تھے ہی نہیں۔

وفاقی وزیر نے انکشاف کیا کہ وزیر اعظم عمران خان وزراء کو خبردار کرچکے ہیں کہ ہمارے پاس ساڑھے پانچ چھ مہینے ہیں جس میں ہمیں خود کو تگڑا کرنا ہوگا ورنہ وقت ہاتھ سے نکل جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ نئے آنے والے لوگ نہ عمران خان کی سوچ سے ہم آہنگ ہیں اور نہ ان میں صلاحیت ہے تو پھر عمران خان کا وژن کیسے آگے بڑھ سکتا ہے۔

وفاقی وزیر فواد چوہدری نے مزید کہا کہ عمران خان کی ناکامی کسی انفرادی شخص کی ناکامی نہیں ، اسے کوئی افورڈ نہيں کرسکتا ، عمران خان کو اس لیے سپورٹ کیا جارہاہے کہ کوئی اور سیاسی آپشنز نہيں ہیں، یہاں سیاسی جماعتیں نہيں ہیں، لوگ لیڈرز کو سپورٹ کرتے ہیں۔ 

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM