کورونا کا اب تک کا خطرناک ترین ویرینٹ سامنے آگیا، دنیا میں پھر ہلچل مچ گئی

2019 کے آخر اور  2020 کے اوائل میں چین سے شروع ہونے والے کورونا وائرس نے دنیا کو پوری طرح تبدیل کردیا اور اب اس وائرس کا اب تک کا خطرناک ترین ویرینٹ بھی سامنے آگیا ہے جس نے دنیا میں ایک بار پھر ہلچل مچادی ہے۔

کورونا وائرس کی یہ نئی قسم جنوبی افریقا کے ایک صوبے میں دریافت ہوئی ہے جس کے حوالے سے ماہرین کا کہنا ہے کہ اس میں اوریجنل کورونا وائرس کے مقابلے میں اس قدر تبدیلیاں رونما ہوچکی ہیں کہ کورونا کی اب تک بنائی جانے والی ویکسینز کی مؤثریت 40 فیصد تک کم ہوسکتی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اس نئے ویرینٹ کا مشاہدہ کرنے کے بعد وہ حیران رہ گئے کیوں کہ انہوں نے اس سے قبل کورونا کی اتنی خطرناک قسم نہیں دیکھی۔

اس وائرس کا نام کیا ہے؟

ابتدائی طور پر کورونا وائرس کے اس نئے ویرینٹ کو B.1.1.529 کا نام دیا گیا تھا تاہم بعد ازاں عالمی ادارہ صحت کی جانب سے اسے OMICRON کا نام دیا گیا— فوٹو: بی بی سی
ابتدائی طور پر کورونا وائرس کے اس نئے ویرینٹ کو B.1.1.529 کا نام دیا گیا تھا تاہم بعد ازاں عالمی ادارہ صحت کی جانب سے اسے OMICRON کا نام دیا گیا— فوٹو: بی بی سی

ابتدائی طور پر کورونا وائرس کے اس نئے ویرینٹ کو B.1.1.529 کا نام دیا گیا تھا تاہم بعد ازاں عالمی ادارہ صحت کی جانب سے اسے OMICRON کا نام دیا گیا۔ ماہرین کہتے ہیں کہ ویکسین شدہ افراد بھی اس سے متاثر ہوسکتے ہیں۔

اس وائرس کا گڑھ کہاں ہے؟

برطانیہ نے تو جنوبی افریقا ، لیسوتھو ، بوٹسوانا، نمیبیا، اسواتینی اور زمبابوے کو کورونا پابندیوں والی ریڈ لسٹ میں شامل کردیا ہے— فوٹو: ڈیلی میل
برطانیہ نے تو جنوبی افریقا ، لیسوتھو ، بوٹسوانا، نمیبیا، اسواتینی اور زمبابوے کو کورونا پابندیوں والی ریڈ لسٹ میں شامل کردیا ہے— فوٹو: ڈیلی میل

ابتدائی طور پر تو اس نئے ویرینٹ کے کیسز جنوبی افریقا کے ایک صوبے خاؤتنگ میں سامنے آئے ہیں، یہ جنوبی افریقا کا گنجان ترین صوبہ ہے اور اس کا پہلا کیس 22 نومبر کو رجسٹر ہوا۔

کیا یہ جنوبی افریقا سے باہر بھی جاچکا ہے؟

جب تک سائنسدانوں کو کورونا کی اس نئی قسم کا پتہ لگا یہ جنوبی افریقا سے باہر بھی نکل چکی ہے—فوٹو: ڈیلی میل
جب تک سائنسدانوں کو کورونا کی اس نئی قسم کا پتہ لگا یہ جنوبی افریقا سے باہر بھی نکل چکی ہے—فوٹو: ڈیلی میل

جی ہاں جب تک سائنسدانوں کو کورونا کی اس نئی قسم کا پتہ لگا یہ جنوبی افریقا سے باہر بھی نکل چکی ہے۔ اب تک کے اعداد و شمار کے مطابق اس ویرینٹ کے کیسز جنوبی افریقا کے علاوہ بوٹسوانا، ہانگ کانگ ، بیلجیم اور اسرائیل میں بھی سامنے آچکے ہیں جبکہ ممکن ہے کہ یہ دنیا کے اور ممالک میں بھی ہو اور اسے اب تک پہچانا نہ جاسکا ہو۔

یہ کیوں خطرناک ہے؟

کہا جارہا ہے کہ یہ اس سے قبل سامنے آنے والے کورونا وائرس ویرینٹ کے مقابلے میں زیادہ خطرناک ہے کیوں کہ اس میں تیزی سے پھیلنے کی صلاحیت ہے اور ویکسین کا اثر بھی اس پر کم ہوگا— فوٹو: ڈیلی میل
کہا جارہا ہے کہ یہ اس سے قبل سامنے آنے والے کورونا وائرس ویرینٹ کے مقابلے میں زیادہ خطرناک ہے کیوں کہ اس میں تیزی سے پھیلنے کی صلاحیت ہے اور ویکسین کا اثر بھی اس پر کم ہوگا— فوٹو: ڈیلی میل

کہا جارہا ہے کہ یہ اس سے قبل سامنے آنے والے کورونا وائرس ویرینٹ کے مقابلے میں زیادہ خطرناک ہے کیوں کہ اس میں تیزی سے پھیلنے کی صلاحیت ہے اور ویکسین کا اثر بھی اس پر کم ہوگا۔

جنوبی افریقا کے محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ اس نئے ویرینٹ میں اتنی زیادہ تبدیلیاں ہیں کہ اس کی توقع سائنسدانوں کو نہیں تھی۔ اس ویرینٹ میں ابتدائی کورونا وائرس کے مقابلے میں تقریباً 50 تبدیلیاں ہیں جن میں سے 30 تبدیلیاں اسپائیک پروٹین میں ہے۔

جنوبی افریقا کے محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ اس نئے ویرینٹ میں اتنی زیادہ تبدیلیاں ہیں کہ اس کی توقع سائنسدانوں کو نہیں تھی— فوٹو: ڈیلی میل
جنوبی افریقا کے محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ اس نئے ویرینٹ میں اتنی زیادہ تبدیلیاں ہیں کہ اس کی توقع سائنسدانوں کو نہیں تھی— فوٹو: ڈیلی میل

اب تک بنائی جانے والی ویکسینز وائرس کے اسپائیک پروٹین پر  ہی حملہ کررہی تھیں تاکہ وائرس کو انسانی خلیوں میں داخل ہونے سے پہلے ہی تباہ کیا جاسکے۔ اسپائیک پروٹین میں اتنی زیادہ تبدیلیوں کی وجہ سے دستیاب ویکسینز کا اس وائرس پر اثر 40 فیصد تک کم ہوجائے گا۔

مزید باریکی سے دیکھیں تو اس ویرینٹ کے Receptor Binding Domain حصے (وائرس کا وہ حصہ جو سب سے پہلے انسانی خلیے سے منسلک ہوتا ہے) میں 10 تبدیلیاں ہوچکی ہیں جبکہ بھارت اور دنیا کے دیگر ممالک میں تباہی مچانے والے ڈیلٹا ویرینٹ میں اوریجنل کورونا وائرس کے مقابلے میں صرف 2 تبدیلیاں تھیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ وائرس میں اتنے بڑے پیمانے پر تبدیلی ممکنہ طور پر کسی ایک مریض میں ہوئی جو اس وائرس کو شکست دینے میں ناکام رہا اور وائرس مزید طاقتور ہوگیا۔

وائرس میں ہونے والی ہر تبدیلی خطرناک نہیں ہوتی، یہ جاننا ضروری ہے کہ وائرس میں ہونے والی کونسی تبدیلی کیا اثر کررہی ہے— فوٹو: بشکریہ بی بی سی
وائرس میں ہونے والی ہر تبدیلی خطرناک نہیں ہوتی، یہ جاننا ضروری ہے کہ وائرس میں ہونے والی کونسی تبدیلی کیا اثر کررہی ہے— فوٹو: بشکریہ بی بی سی

وائرس میں ہونے والی ہر تبدیلی خطرناک نہیں ہوتی، یہ جاننا ضروری ہے کہ وائرس میں ہونے والی کونسی تبدیلی کیا اثر کررہی ہے۔

ماہرین کہتے ہیں کہ وائرس جتنے زیادہ لوگوں میں پھیلتا ہے اس میں اتنی ہی زیادہ تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں، اب تک کورونا وائرس ہزاروں کی تعداد میں چھوٹی چھوٹی تبدیلیاں کر چکا ہے جن کا کوئی خاص اثر نہیں پڑتا البتہ اسپائیک پروٹین میں ہونے والی تبدیلی اہم ہوتی ہے جس کی وجہ سے وائرس کا نیا ویرینٹ وجود میں آتا ہے۔

نئے ویرینٹ کی علامات کیا ہوں گی؟

ماہرین کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کے اس نئے ویرینٹ کی علامات تو کافی حد تک وہی ہیں جو اس سے قبل دیکھنے میں آئی ہیں یعنی بخار، کھانسی، تھکن، ذائقہ چلا جانا، سونگھنے کی حس کا ختم ہونا اور زیادہ سنگین حالت میں سانس لینے میں دشواری اور سینے میں تکلیف وغیرہ شامل ہیں۔ ماہرین کہتے ہیں کہ اس ویرینٹ کی علامات دیگر ویرینٹ سے زیادہ شدید ہوسکتی ہیں۔ 

اس ویرینٹ سے دنیا میں کیا تبدیلیاں رونما ہورہی ہیں؟

جنوبی افریقا میں سامنے آنے والے اس نئے ویرینٹ کے اثرات دنیا بھر میں نظر آنا شروع ہوگئے ہیں۔

ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ نئے ویرینٹ کےسبب دسمبر کے وسط تک دنیا میں کورونا کی چوتھی لہر سامنے آسکتی ہے۔

برطانیہ نے تو جنوبی افریقا ، لیسوتھو ، بوٹسوانا، نمیبیا، اسواتینی اور زمبابوے کو کورونا پابندیوں والی ریڈ لسٹ میں شامل کردیا ہے اور ان ممالک سے پروازوں کی آمد پر پابندی لگادی ہے۔ برطانیہ کا کہنا ہے کہ اب تک ان کے ملک میں کورونا کی نئی قسم کاکوئی کیس سامنے نہیں آیا۔

برطانوی وزیر صحت ساجد جاوید کا کہنا ہے کہ ان چھ ممالک سے جو بھی شخص برطانیہ آئے گا اسے قرنطینہ کرنا ہوگا۔

یورپی یونین نے بھی جنوبی افریقا اور خطے کے دیگر ممالک پر سفری پابندیاں عائد کرنے کی سفارش کردی ہے اور رکن ممالک سے کہا ہے کہ اسکریننگ سخت کردیں، جرمنی اور دیگر یورپی ممالک نے جنوبی افریقی خطے سے پروازوں کی آمد پر پابندی عائد کردی ہے۔

امریکا نے بھی جنوبی افریقا سمیت 8 افریقی ممالک پر سفری پابندیاں عائد کرنے کا اعلان کردیا ہے۔ 

ادھر سعودی عرب نے بھی مذکورہ 6 ممالک پر سفری پابندیاں عائد کردی ہیں۔ اس کے علاوہ اسرائیل، جاپا ن ، سنگاپور نے بھی سفری پابندیوں کا اعلان کیا ہے۔

جنوبی افریقا نے ان پابندیوں پر ناراضی کا اظہا بھی کیا ہے۔ 

عالمی منڈی میں تیل کی قیمت کم ہوگئی

کورونا کی نئے ویرینٹ کی خبر نے عالمی سطح پر سرمایہ کاروں کو بھی خوفزدہ کردیا ہے اور خام تیل کی عالمی منڈی میں قیمتیں اپریل 2020 کے بعد کم ترین سطح پر آگئی ہیں۔

رائٹرز کے مطابق برینٹ کروڈ آئل کی قیمت 8.62 ڈالر فی بیرل کم ہوکر 73.60 ڈالر ہوگئی ہے جبکہ امریکی خام تیل کی قیمت 9.36 ڈالر کم ہوکر 69.03 ڈالر فی بیرل ہوگئی ہے۔

اس کے علاوہ دنیا بھر میں اسٹاک مارکیٹ پر بھی اس کا اثر پڑا ہے اور امریکا، فرانس ، جرمنی اور برطانیہ کی اسٹاک مارکیٹوں میں مندی دیکھی گئی۔

عالمی ادارہ صحت کیا کہتا ہے؟

کورونا وائرس کے نئے ویرینٹ پر سنجیدگی سے غور کیلئے عالمی ادارہ صحت کے ٹیکنیکل ورکنگ گروپ کا جائزہ اجلاس ہوا— فوٹو: فائل
کورونا وائرس کے نئے ویرینٹ پر سنجیدگی سے غور کیلئے عالمی ادارہ صحت کے ٹیکنیکل ورکنگ گروپ کا جائزہ اجلاس ہوا— فوٹو: فائل

کورونا وائرس کے نئے ویرینٹ پر سنجیدگی سے غور کیلئے عالمی ادارہ صحت کے ٹیکنیکل ورکنگ گروپ کا جائزہ اجلاس ہوا۔

ترجمان عالمی ادارہ صحت کا کہناہے جنوبی افریقا میں پائے گئے کورونا کے نئے ویرینٹ میں بڑی تعداد میں تبدیلیاں ہوئی ہیں۔ یہ دیکھنے میں کچھ ہفتے لگیں گے کہ نئے ویرینٹ کے کیسز میں استعمال ہونے والی ویکسین نے کیا اثر دکھایا۔

عالمی ادارہ صحت نے نئے ویرینٹ کو خطرے کی گھنٹی کہا اور اسے کورونا وائرس کا پانچواں ویرینٹ قرار دیا۔

اس سے قبل کورونا کے کتنے ویرینٹ آچکے؟

چین میں پہلی بار SARS CoV-2 سامنے آنے کے بعد سے سے کورونا وائرس کے اب تک 5 ویرینٹ آچکے ہیں— فوٹو: فائل
چین میں پہلی بار SARS CoV-2 سامنے آنے کے بعد سے سے کورونا وائرس کے اب تک 5 ویرینٹ آچکے ہیں— فوٹو: فائل

چین میں پہلی بار SARS CoV-2 سامنے آنے کے بعد سے سے کورونا وائرس کے اب تک 5 ویرینٹ آچکے ہیں۔ پہلے ویرینٹ کو الفا کا نام دیا گیا تھا جو برطانیہ میں پھیلا اور اسے یوکے ویرینٹ بھی کہا جاتا ہے۔ 

اس کے بعد بیٹا ویرینٹ سامنے آیا۔ یہ ویرنٹ جنوبی افریقا میں سامنے آیا اور پھر دنیا کے دیگر ممالک میں پھیلا۔

پھر گاما ویرینٹ سامنے آیا جو برازیل میں پھیلا  جس کے بعد ڈیلٹا ویرینٹ نے بھارت میں بڑے پیمانے پر تباہی پھیلائی۔

اب اس کا پانچواں ویرینٹ سامنے آگیا ہے جسے OMICRON کا نام دیا گیا ہے۔

اس سے کیسے بچا جاسکے گا؟

کورونا وائرس کے دیگر ویرینٹس کی طرح اس سے بھی بچنے کیلئے احتیاطی تدابیر پر سختی سےعمل کرنا ہوگا—فوٹو: فائل
کورونا وائرس کے دیگر ویرینٹس کی طرح اس سے بھی بچنے کیلئے احتیاطی تدابیر پر سختی سےعمل کرنا ہوگا—فوٹو: فائل

کورونا وائرس کے دیگر ویرینٹس کی طرح اس سے بھی بچنے کیلئے احتیاطی تدابیر پر سختی سےعمل کرنا ہوگا۔ کورونا وائرس کی بنیادی ایس او پیز یعنی ماسک پہننا، ہاتھ کو وقفے وقفے دے دھونا، سماجی فاصلے وغیرہ پر عمل کرنا ہوگا۔

یہ تمام تر احتیاطیں اس وقت تک لازمی ہوں گی جب تک اس ویرینٹ کیخلاف ویکیسن کی اثر پذیری کے حوالے سے ڈیٹا سامنے نہیں آجاتا۔ اگر موجودہ ویکسینز اس ویرینٹ کے خلاف بھی مؤثر ثابت ہوئیں تو جلد اس پر قابو پالیا جائے گا ورنہ سائنسدانوں کو نئے وائرس کے حساب سے ویکسین میں بھی تبدیلیاں کرنی ہوں گی۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM