فاٹا انضمام کے خاتمے پر بات نہیں ہو سکتی، ٹی ٹی پی کو آگاہ کر دیا گیا: عسکری قیادت کی بریفنگ

ٹی ٹی پی سے مذاکرات میں دیگر نکات پر بات چیت جاری رہے گی، دیگر نکات میں نقصانات کے معاوضے سمیت ساتھیوں کی رہائی شامل ہے، قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی— فوٹو: فائل
ٹی ٹی پی سے مذاکرات میں دیگر نکات پر بات چیت جاری رہے گی، دیگر نکات میں نقصانات کے معاوضے سمیت ساتھیوں کی رہائی شامل ہے، قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی— فوٹو: فائل

وزیراعظم شہباز شریف کی زیر صدارت قومی سلامتی کے معاملے پر ہونے والے اجلاس کی اندرونی کہانی سامنے آگئی۔

اجلاس میں کالعدم تحریک طالبان (ٹی ٹی پی) کے ساتھ مذاکرات کے  یک نکاتی ایجنڈے پر بریفنگ دی گئی،اجلاس میں ٹی ٹی پی سے جاری مذاکرات کے تمام نکات پر تفصیلی بات چیت ہوئی۔

ذرائع کے مطابق ڈی جی آئی ایس آئی نے ٹی ٹی پی سے مذاکرات پر شرکاء کو بریفنگ دی،کور کمانڈر  پشاور لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید نے بھی ٹی ٹی پی سے مذاکرات کی تفصیلات بتائیں۔

ذرائع کے مطابق قومی سلامتی کمیٹی کو ٹی ٹی پی کے ساتھ ہونے والے ماضی کے معاہدوں کی تفصیلات سے بھی آگاہ کیا گیا، کمیٹی کے شرکاء نے اتفاق کرتے ہوئے کہا کہ ٹی ٹی پی سے مذاکرات کن شرائط پر ہونے چاہئیں اس کا مینڈیٹ پارلیمنٹ کو  دیا جائے، ٹی ٹی پی کی فاٹا انضمام کے خاتمے کی شرط ریڈ لائن ہے۔

عسکری قیادت نے بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ فاٹا انضمام کے خاتمے پر بات نہیں ہو سکتی، ٹی ٹی پی کو آگاہ کر دیا گیا ہے، ٹی ٹی پی کے ساتھ مذاکرات میں دیگر نکات پر بات چیت جاری رہے گی، دیگر نکات میں ٹی ٹی پی کو نقصانات کے معاوضے سمیت  ساتھیوں کی رہائی شامل ہے۔

عسکری قیادت نے کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ ٹی ٹی پی سے ان امور پر بات چیت جاری رہے گی، ٹی ٹی پی سے ابھی سیز فائر ہے، معاہدے پر پہنچنے کیلئے پر عزم ہیں۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM