Election 2024 Election 2024

سپریم کورٹ نے ریکوڈک معاہدے کو قانونی قرار دیدیا

سپریم کورٹ نے ریکوڈک منصوبے کو قانونی قرار دیدیا۔

چیف جسٹس پاکستان عمر عطا بندیال نے 13 صفحات پر مشتمل ریکوڈک ریفرنس پر مختصر رائے سنائی۔ سپریم کورٹ کے لارجر بینچ نے صدارتی ریفرنس پر متفقہ رائے کا اظہار کیا۔

سپریم کورٹ نے اپنی رائے میں لکھا کہ ریکوڈک ریفرنس میں صدر مملکت نے 2 سوالات پوچھے تھے، رائے میں بین الاقوامی ماہرین نے عدالت کی معاونت کی۔

عدالت کی رائے میں لکھا ہے کہ  آئین پاکستان خلاف قانون قومی اثاثوں کے معاہدے کی اجازت نہیں دیتا، صوبے معدنیات سے متعلق قوانین میں ترامیم اور تبدیلی کر سکتے ہیں۔

سپریم کورٹ نے اپنی رائے میں لکھا کہ ریکوڈک معاہدہ قانون سے متصادم نہیں ہے، نئے ریکوڈک معاہدے میں کوئی غیرقانونی بات نہیں، بلوچستان اسمبلی کو بھی معاہدے سے متعلق بریفنگ دی گئی۔

عدالت عظمیٰ نے اپنی رائے میں لکھا کہ ریکوڈک معاہدہ سپریم کورٹ کے 2013 کے فیصلے کے خلاف نہیں ہے، ریکوڈک معاہدہ ماحولیات سے متعلق بھی درست ہے، ماہرین کی رائے لے کرہی وفاقی اور صوبائی حکومت نے معاہدہ کیا، بلوچستان اسمبلی کو بھی معاہدے پر اعتماد میں لیا گیا تھا، منتخب عوامی نمائندوں نے معاہدے پر کوئی اعتراض نہیں کیا۔


یاد رہے کہ صدر مملکت نے ریکوڈک ریفرنس 15 اکتوبر کو رائے مانگنے کے لیے درخواست دی تھی، سپریم کورٹ نے ریکوڈک صدارتی ریفرنس پر 17 سماعتیں کیں۔

مزید خبریں :