Can't connect right now! retry

کاروبار
26 ستمبر ، 2020

باستمی چاول کے معاملے پر پاکستان اور بھارت آمنے سامنے آگئے

پاکستان ہر سال5 سے 7 لاکھ ٹن باسمتی چاول دنیا کے مختلف ممالک کو برآمد کرتا ہے،فوٹو:فائل

پاکستان میں صدیوں سے پیدا ہونے والے باستمی چاول پر بھارت نے دعویٰ کیا ہے کہ وہ اس کی جغرافیائی نشانی ہے، پاکستانی تاجروں کے دباؤ  پر حکومت نے بھارتی دعوے کو  چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

یورپی  یونین میں بھارت نے درخواست جمع کرائی ہے کہ باسمتی چاول اس کی جغرافیائی نشانی ہے اور یہ بھارت کی پیداوار ہے جب کہ یورپی ریگولیشن 2006کے مطابق باسمتی چاول اس وقت تک پاکستان اور بھارت دونوں ملکوں کی پیداوار کے طور پر رجسٹرڈ ہے اور حقیقت یہ ہے کہ باسمتی چاول پاکستان میں بھی بڑے پیمانے پر کاشت ہوتا ہے  اور اپنی بہترین خوشبو اور ذائقے کی بدولت اسے بھارت کے باسمتی پر فوقیت حاصل ہے۔

پاکستان ہر سال5 سے 7 لاکھ ٹن باسمتی چاول دنیا کے مختلف ممالک کو برآمد کرتا ہے اور بڑی تعداد میں یہ یورپی ممالک میں بھیجا جاتا ہے۔

پاکستان میں باستمی کی پیداوار کے شواہد 1766 میں لکھے گئے وارث شاہ کے کلام سے ملتا ہے، انگریز دور میں کالاشاہ کاکو میں باستمی پیدا کیے جانے کے شواہد ہیں۔

 یورپی یونین نے بھارتی  دعوے کی تشہیر اپنی ویب سائٹ پر کی ہے مگر یورپی قانون کے مطابق 90 روز میں بھارتی دعوے کو چیلنج کیا جاسکتا ہے، اگر یورپی یونین میں بھارت کا لیبل باسمتی چاول پر لگ گیا تو اس کا مطلب یہ ہے کہ پاکستان یورپ کو یہ چاول باسمتی کے نام سے برآمد نہیں کرسکے گا۔

پاکستان میں باستمی کی پیداوار اور اس کے کاروبار سے جڑے افراد میں بھارتی دعوے پر تشویش ہے، رائس ایکسپوٹرز نے معاملے پر اجلاس منعقد کیا ہے جب کہ حکومت نے اس پر مثبت ردعمل دیا ہے۔

خلیجی اخبار کے مطابق پاکستان اس معاملے پر تیاری کررہا ہے اور جلد بھارتی دعوے کے رد میں پاکستان اپنا مؤقف یورپی یونین میں جمع کروائے گا۔

تاجروں کا کہنا ہے کہ حکومت کو اس معاملے پر سنجیدگی سے پیش رفت کرنا ہوگی کیونکہ باستمی ہمارا ورثہ ہے، یہ صدیوں سے پاکستان میں پیدا ہورہا ہے اور یہ پاکستان کی جغرافیائی نشانی ہے۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM