Election 2024 Election 2024

میں اور آپ درختوں کے مقروض ہیں

دنیا بھر میں ہر سال 21 مارچ کو جنگلات کا دن منایا جاتا ہے، سال 2023 میں اس دن کا مرکزی خیال جنگلات اور صحت ہے— فوٹو: فائل
دنیا بھر میں ہر سال 21 مارچ کو جنگلات کا دن منایا جاتا ہے، سال 2023 میں اس دن کا مرکزی خیال جنگلات اور صحت ہے— فوٹو: فائل

جنگلات کا براہ راست تعلق انسانوں سے ہے۔ان کی اپنی ایک دنیا ہے اور اپنا ایک نظام۔لیکن اگر ان کے نظام میں چھیڑ چھاڑ کی جائے تو یہ انسانی نظام کے لیے بھی تباہی کا باعث بنتے ہیں۔

یہ ہماری صحت کے لیے بہت ضرورری ہیں۔یہ پانی کو صاف کرتے ہیں، ہمیں صاف ہوا مہیا کرتے ہیں، آب و ہوا کی تبدیلی میں کاربن جذب کر کے انسانوں کے کام آتے ہیں اور صرف یہی نہیں بلکہ خوراک بچانے والی ادویات فراہم کر کے انسانوں کی فلاح و بہبود میں کام آتے ہیں۔جب جنگلات ہمارے لیے اتنے ضروری ہیں تو ہم کیوں ان کی حفاظت نہیں کر رہے ؟

دنیا بھر میں ہر سال 21 مارچ کو جنگلات کا دن منایا جاتا ہے۔سال 2023 میں اس دن کا مرکزی خیال جنگلات اور صحت ہے۔یہ دن ہم انسانوں کو اس بات کا احساس دلاتا ہے کہ ان جنگلات سے ہمیں صرف آکسیجن،صاف پانی اور دواؤں سمیت بنیادی ضرورتیں ہی حاصل نہیں کر نی بلکہ ان جنگلات کو ان کی خدمات کے عوض کچھ واپس بھی کرنا ہے۔

صحت مند جنگلات اور زمینی ماحولیاتی نظام لوگوں اور معیشتوں کیلئے اہم خدمات فراہم کرتے ہیں، جیسے حیاتیاتی تنوع کی رہائش گاہ ، صاف پانی ، آب و ہوا کے ضابطے ، کٹاؤ کی روک تھام، فصلوں کی پولی گیشن، مٹی کی ذرخیزی اور سیلاب پر قابو پانا۔

تاہم، جنگلات کی کٹائی اور جنگلات اور زمین کے انحطاط، ماحولیاتی نظام کی ان خدمات کو خطرے میں ڈال رہے ہیں اور عالمی زمین کی 23 فیصد پیداواری صلاحیت کو کم کر رہے ہیں۔ زمین کے انحطاط سے دنیا بھر میں ایک اندازے کے مطابق 3.2 ارب افراد متاثر ہوتے ہیں اور دنیا کے تقریباً 40 فیصد غریب ترین افراد خراب زمین پر رہتے ہیں۔

افریقا کے 27 ممالک کے 43 ہزار گھرانوں پر کیے گئے ایک مطالعے سے معلوم ہوا کہ جنگلات کے ساتھ زندگی گزارنے والے بچوں کی غذائی تنوع ان بچوں کے مقابلے میں کم از کم 25 فیصد زیادہ ہے جو ان سے دور تھے۔

ادویاتی مقاصد کے لئے استعمال ہونے والے پودوں کی انواع کی کل تعداد 50000 تک ہے۔ آپ سوچ سکتے ہیں کہ ان جڑی بوٹیوں کے ناپید ہونے کی صورت میں انسانیت کو بیماریوں کے مقابلے میں کن شدید دشواریوں کا سامنا ہو سکتا ہے۔صرف اتنا ہی نہیں بلکہ ان جنگلات میں کچھ دیر کا وقت گزارنا بھی ہماری صحت کے لیے انتہائی مفید ہے۔

متعدد مطالعات سے ثابت ہوا ہے کہ جنگل کے ماحول کا دورہ بلڈ پریشر اور نبض کی شرح کو اور کولیسٹرول کی سطح کو کم کرتا ہے۔

جنگلات کی کٹائی کی وجہ سے دنیا میں ہر سال ایک کروڑ ہیکٹر جنگلات ختم ہو رہے ہیں جو آئس لینڈ کے برابر ہیں اور کیڑے مکوڑے سالانہ تقریباً ساڑھے تین کروڑ ہیکٹر جنگلات کو نقصان پہنچاتے ہیں۔

دنیا کے گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج کا تقریباً 12 فیصد جنگلات کی کٹائی اور جنگلات کے انحطاط کی وجہ سے ہے۔ آب و ہوا کی تبدیلی اور زمین کے بارے میں 2019 کی آئی پی سی سی کی خصوصی رپورٹ نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ جنگلات لگانا اور موجودہ جنگلات کا تحفظ گلوبل وارمنگ کو 1.5 ڈگری سینٹی گریڈ یا 2 ڈگری سینٹی گریڈ اضافے سے نیچے محدود کرنے کی کلید ہے۔ اس طرح کی سرمایہ کاری کی فوری ضرورت ہے کیونکہ دنیا کے باقی ماندہ جنگلات زرعی توسیع، لکڑی نکالنے اور ایندھن کی لکڑی جمع کرنے جیسی سرگرمیوں سے تیزی سے خطرے میں ہیں۔ آئی پی بی ای ایس کا اندازہ ہے کہ فطرت پر مبنی حل میں سرمایہ کاری 2030 تک ماحولیاتی تبدیلی کو کم کرنے میں تقریباً 37 فیصد حصہ ڈال سکتی ہے جس سے روزگار اور حیاتیاتی تنوع کے مشترکہ فوائد پیدا ہوں گے۔

جنگلات اور زمینی ماحولیاتی نظام سے حاصل ہونے والی اشیاء دیہی آبادیوں کیلئے ایک اہم پوشیدہ فصل فراہم کرتی ہیں، جس سے بہت سے لوگ انتہائی غربت سے باہر رہتے ہیں۔ ایک اندازے کے مطابق 4.17 ارب لوگ (شہری علاقوں سے باہر کے تمام لوگوں کا 95 فیصد) جنگل کے 5 کلومیٹر کے اندر رہتے ہیں اور 3.27 ارب ایک کلومیٹر کے اندر رہتے ہیں۔ بہت سے ٹراپیکل ممالک میں، جنگلات سے متصل لوگ اپنی آمدنی کا تقریباً ایک چوتھائی حصہ جنگلات سے کماتے ہیں۔

کووڈ 19 وبائی مرض نے صحت مند جنگلات اور زمینی ماحولیاتی نظام کی اہمیت کو اجاگر کیا۔ 1960 کے بعد سے رپورٹ ہونے والی 30 فیصد سے زیادہ نئی بیماریوں کی وجہ زمین کے استعمال میں تبدیلی ہے، جس میں جنگلات کی کٹائی بھی شامل ہے اور 250 ابھرتی ہوئی متعدی بیماریوں میں سے 15 فیصد جنگلات سے منسلک ہیں۔ جنگلات کی کٹائی، خاص طور پر قطبی علاقوں میں، متعدی بیماریوں جیسے ڈینگی بخار اور ملیریا میں اضافے سے منسلک ہے۔ زراعت، شہرکاری اور دیگر زمین کے استعمال کیلئے جنگلات کو صاف کرنا رہائش گاہ کے نقصان یا انحطاط کا سبب بنتا ہے۔

اپنے پچھلے فاریسٹ ایکشن پلان کی بنیاد پر ورلڈ بینک گروپ نے فاریسٹ اینڈ لینڈ اسکیپ اپروچ تیار کی ہے جو زراعت، نقل و حمل اور توانائی جیسے شعبوں میں ترقی، حیاتیاتی تنوع، ماحولیاتی نظام کی خدمات، آب و ہوا کی تبدیلی کو کم کرنے اور جنگلات اور دیگر زمینی ماحولیاتی نظاموں پر موافقت کیلئے مثبت نتائج پیدا کرنے کیلئے زمینی مناظر پر ایک جامع نظر رکھتا ہے۔

2019 میں شروع کی گئی پائیدار اور لچکدار مناظر کیلئے ایک عالمی شراکت داری، ’پروگرین‘ معاش کو بہتر بنانے اور جنگلات اور تمام زمینی ماحولیاتی نظاموں کے انتظام اور تحفظ، حیاتیاتی تنوع کے تحفظ، لینڈ اسکیپ کی بحالی اور آب و ہوا کی تبدیلی کو کم کرنے اور موافقت میں سرمایہ کاری کو مضبوط بنانے ککیلئے ممالک کی کوششوں کی حمایت کرتی ہے۔ ایک مربوط لینڈ اسکیپ نقطہ نظر کے ذریعے پروگرین ممالک کو اپنے قومی اور عالمی پائیدار ترقی کے اہداف اور وعدوں کو پورا کرنے میں مدد کرتا ہے۔

ایک رپورٹ کے مطابق چین نے 2022 میں شجرکاری کو آگے بڑھانے میں نئی پیش رفت کی ہے ، جس میں نئے لگائے گئے جنگلات کا رقبہ 3اعشاریہ 83 ملین ہیکٹر ہے۔

نیشنل گریننگ کمیشن کی رپورٹ کے مطابق، چین نے 2022 میں گھاس کی کاشت کے ذریعے 3اعشاریہ 21 ملین ہیکٹر خراب گھاس کے میدان کو بھی بحال کیا ہے۔

دہائیوں کی شجرکاری کے بعد، چین میں جنگلات کی کوریج کی شرح 1980 کی دہائی کے اوائل میں 12 فیصد سے بڑھ کر گزشتہ سال 24اعشاریہ 02 فیصد ہوگئی ہے۔

چین کی گرین موومنٹ 2030 تک کاربن ڈائی آکسائیڈ کے اخراج کو بڑھانے اور 2060 تک کاربن غیر جانبداری حاصل کرنے کے اپنے وعدے کو پورا کرنے کی چین کی کوششوں کا بھی حصہ ہے، کیونکہ جنگلات اور گھاس کے میدان اہم کاربن سنک ہیں جو ماحول سے کاربن ڈائی آکسائیڈ کو جذب اور ذخیرہ کرتے ہیں۔

چین کی نیشنل فارسٹری اینڈ گراس لینڈ ایڈمنسٹریشن کی جانب سے شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق گزشتہ دہائی کے دوران عوام کی مسلسل کوششوں سے چین کے جنگلات کے رقبے میں 22 ملین ہیکٹر ز کا اضافہ ہوا ہے۔

اس ترقی نے کاؤنٹی کے ماحولیاتی ماحول کو نمایاں طور پر بہتر بنایا ہے جبکہ اس مدت کے دوران دنیا میں نئے جنگلات میں اضافے میں ایک چوتھائی حصہ چین کا ہے۔ جنوری 1989 میں چین کے موجودہ صدر شی جن پنگ صوبہ فو جیان کے شہر نینگ دہ  میں کمیونسٹ پارٹی آف چائنا (سی پی سی) کے سربراہ تھے اور اس وقت انہوں نے ایک کتاب میں یہ تصور پیش کیا تھا کہ جنگلات آب وزر اور خوراک کے ذخائر ہیں۔یہ تصور ان کے حیاتیاتی تحفظ کے نظریے کی بنیاد سمجھا جا سکتا ہے۔ان کی قیادت میں فو جیان میں جنگلات کے انتظامات سے متعلق اصلاحات  کا آغاز کیا گیا۔کئی برسوں کی کوشش کے بعد اس وقت کے فوجیان میں ماحولیاتی تحفظ کو بڑا فروغ ملا۔وو پھنگ کاؤنٹی کی مثال لی جائے تو سال 2017 میں اسےچین کے قدرتی "آکسیجن بار" کی فہرست میں شامل کیا گیا تھا اور وہاں جنگلات  کے رقبے کی شرح تقریباً 80 فیصد ہو چکی ہے، وہاں کے دیہات میں رہنے والے لوگ جنگلات میں مخصوص پودے لگا کر لکڑی کاٹے بغیر بھی پیسے کما سکتے ہیں۔ یوں وہاں کے جنگلات لوگوں کی آمدنی میں اضافے کیلئے "سبز بینک" میں تبدیل ہو چکے ہیں۔

چین میں جنگلات کے رقبے کی شرح اب 24اعشاریہ 02 فیصد ہے جو 1949 میں عوامی جمہوریہ چین کے قیام کے وقت 8اعشاریہ 6 فیصد تھی۔ بڑے پیمانے پر شجرکاری کے اہم چینی اقدام میں ایک بڑا منصوبہ تھری نارتھ شیلٹر بیلٹ فاریسٹ ہے۔

1978میں شروع ہونے والے اس منصوبے میں چین کے شمالی حصے میں وسیع پیمانے پر پناہ گاہیں تیار کی گئی ہیں تاکہ ریت کے طوفان اور مٹی کے کٹاؤ کو روکا جا سکے۔ یہ 4اعشاریہ 069 ملین مربع کلومیٹر کے مشترکہ رقبے پر محیط ہے جو ملک کے زمینی رقبے کا 42 اعشاریہ 4 فیصد ہے

1978سے 2023 تک، چین میں جنگلات کے رقبے کی شرح میں 10 فیصد سے زیادہ پوائنٹس کا اضافہ ہوا ہے، جو دنیا میں سب سے تیز ہے.

صحرا کو سرسبز کرنے کے علاوہ درخت ریت کو کنٹرول کرنے میں بھی اہم کردار ادا کرتے ہیں.دریائے زرد مٹی سے بھرا دنیا کا بڑا دریا ہے۔ کئی دہائیوں سے یہاں درخت لگانے کی بدولت اس کی سالانہ مٹی کے اخراج میں 400 ملین ٹن کی کمی واقع ہوئی ہے۔

اکثر ادبی کہانیوں اور نظموں میں درختوں کی یہ صفت بتائی جاتی ہے کہ یہ خود دھوپ برداشت کرتے ہیں اور انسانوں کو سایہ دیتے ہیں۔ کہنے کو تو عام سی بات ہے لیکن اگر درختوں کی صرف اس ایک صفت پر بھی کچھ دیر کیلئے غور کیا جائے تو اندازہ ہوتا ہے کہ واقعی یہ اپنی پوری عمر زمین سے اٹھ کر اپنا قد بڑا کرنے میں صرف اس لیے صرف کرتے ہیں کہ پرندے ان پر اپنا گھر بنا سکیں اور انسان اس کے سائے میں اور اس سے ملنے والی ادویات اور غذائوں سے اپنی زندگی بہتر بنا سکیں۔یہ کتنی بڑی قربانی ہے لیکن اس قربانی کے بارے میں سوچنا آج کے دن کیلئے بہت اہمیت رکھتا ہے کہ نہ جانے ہم نے کتنے درخت کاٹ دیے یا کٹتے ہوئے دیکھ لیے پر کیا ایک درخت آئندہ آنے والی نسلوں کے لیے اپنے ہاتھوں سے لگایا ہے؟اگر نہیں تو ہم صرف ان درختوں ،ان جنگلات اور آئندہ آنے والی نسلوں کے نہیں بلکہ ہر اس سانس کیلئے ان کے مقروض ہیں جو ہم نے زندہ رہنے کے لیے کئی سالوں تک ان سے حاصل کی ہے۔


جیو نیوز، جنگ گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔