صحت و سائنس
30 ستمبر ، 2022

گنج پن کا باعث بن جانے والی چند عام وجوہات

کسی بھی عمر یں بالوں کے گرنے یا گنج پن کا سامنا ہوسکتا ہے / فائل فوٹو
کسی بھی عمر یں بالوں کے گرنے یا گنج پن کا سامنا ہوسکتا ہے / فائل فوٹو

یہ بات درست ہے کہ خواتین کے مقابلے میں مردوں میں گنج پن یا بالوں سے محرومی کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔

مگر یہ بھی حقیقت ہے کہ مردوں اور خواتین دونوں کو  کسی بھی عمر میں بالوں کے گرنے یا گنج پن کا سامنا ہوسکتا ہے۔

بالوں سے محرومی کی مختلف وجوہات ہوتی ہیں جن میں سے کچھ کو کنٹرول کرنا بھی ممکن ہوتا ہے۔

تو بالوں سے محرومی کی ایسی وجوہات کے بارے میں جانیں جن کی روک تھام ممکن ہے۔

وٹامن اے کا بہت زیادہ استعمال

ویسے تو وٹامنز (جیسے وٹامن ڈی، وٹامن بی 7 ) کی کمی بھی بالوں سے محرومی کا باعث بنتی ہے مگر سپلیمنٹس یا ادویات کی شکل میں وٹامن اے کا زیادہ استعمال بھی بالوں کے گرنے کا عمل تیز کردیتا ہے۔

ہمارے جسم کو روزانہ 5 ہزار انٹرنیشنل یونٹ (آئی یو) وٹامن اے کی ضرورت ہوتی ہے جبکہ سپلیمنٹس میں یہ مقدار ڈھائی سے 10 ہزار آئی یو تک ہوتی ہے تو بالوں سے محرومی کا خطرہ بڑھ سکتا ہے، مگر اچھی خبر یہ ہے کہ اس وٹامن کی اضافی مقدار کا استعمال روک کر اس عمل کو روکا جاسکتا ہے۔

تناؤ یا بیماری

تناؤ یا کوئی بیماری بھی گنج پن کا باعث بن سکتے ہیں۔

تناؤ کے شکار افراد کے بال بہت تیزی سے گرنے لگتے ہیں جبکہ کسی بیماری سے جسم پر بڑھنے والے تناؤ سے بھی بالوں کی نشوونما رک سکتی ہے۔

جب جسم تناؤ کا شکار ہوتا ہے تو ایسے ہارمون خارج کرتا ہے جو بالوں کی جڑوں کو نقصان پہنچاتے ہیں جس سے بال گرنے لگتے ہیں یا گنج پن کا بھی سامنا ہوسکتا ہے۔

تناؤ پر قابو پاکر اس خطرے کو کم کیا جاسکتا ہے مگر یہ اتنا آسان بھی نہیں ہوتا بلکہ اس حوالے سے ڈاکٹر سے مشورہ کرنا ضروری ہوتا ہے۔

پروٹین کی کمی

امریکن اکیڈمی آف Dermatology کے مطابق غذا میں پروٹین کی بہت کم مقدار کا نتیجہ بالوں سے محرومی کی شکل میں نکلتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ جسمانی وزن میں کمی لانے کے لیے ڈائیٹنگ کرنے سے لوگوں کے بال تیزی سے گرنے لگتے ہیں۔

انڈوں، چکن اور دہی وغیرہ سے آپ آسانی سے اپنی غذا میں پروٹین کی مقدار کا اضافہ کرسکتے ہیں۔

آئرن کی کمی

امریکن اکیڈمی آف Dermatology نے آئرن کی کمی کو بھی بالوں سے محرومی کی وجہ قرار دیا ہے۔

آئرن کی کمی انیمیا کا بھی باعث بنتی ہے جس کے باعث تھکاوٹ، سانس لینے میں مشکلات یا سینے میں تکلیف جیسی علامات کا سامنا ہوتا ہے۔

آئرن کی کمی دور کرنے کے لیے ڈاکٹر سپلیمنٹس یا آئرن سے بھرپور غذاؤں (سرخ گوشت، مچھلی، سبز پتوں والی سبزیاں جیسے پالک، مٹر، خشک پھل جیسے آلوبخارے اور خوبانی اور کلیجی وغیرہ) کو تجویز کرسکتے ہیں۔

تھائی رائیڈ کا عارضہ

تھائی رائیڈ کے مختلف مسائل سے بھی بالوں سے محرومی کا سامنا ہوسکتا ہے۔

امریکن اکیڈمی آف Dermatology کے مطابق تھائی رائیڈ کے کسی عارضے کے شکار افراد کے بال گرنے لگتے ہیں۔

اس کی روک تھام کے لیے ڈاکٹروں سے رجوع کرنا بہتر ہوتا ہے جو اس کی تشخیص کرکے علاج تجویز کرسکتے ہیں۔

جسمانی وزن میں کمی

ماہرین کے مطابق جسمانی وزن میں کمی سے بھی بالوں کا گھنا پن کم ہوتا ہے۔

ویسے تو جسمانی وزن میں کمی لانا صحت کے لیے مفید ہوتا ہے مگر اس سے جسم پر غیرضروری تناؤ بڑھتا ہے جو بالوں کی صحت پر بھی اثرانداز ہوتا ہے۔

اگر بالوں سے محرومی کی وجہ جسمانی وزن میں کمی ہو تو جسم کی غذائی ضروریات کو معمول پر لانے سے اس کی روک تھام ہوسکتی ہے۔

ادویات

ایک تحقیق کے مطابق مختلف ادویات بھی بالوں سے محرومی کا خطرہ بڑھاتی ہے۔

ان میں خون پتلا کرنے والی اور بلڈ پریشر پر قابو پانے والی ادویات نمایاں ہیں، اگر مخصوص ادویات کے استعمال سے بال تیزی سے جھڑنے لگے تو ڈاکٹر سے متبادل ادویات کے لیے مشورہ کرنا چاہیے۔

بالوں کی اسٹائلنگ

ماہرین کے مطابق بالوں کے مشکل اسٹائل اور ٹریٹمنٹس سے بھی گنج پن کا خطرہ بڑھتا ہے۔

بالوں کو سختی سے باندھنے ، کیمیکلز کا استعمال، ہاٹ آئل ٹریٹمنٹس یا دیگر سے بالوں کی جڑیں متاثر ہوسکتی ہیں جس سے ان کی نشوونما رک جاتی ہے۔

اس حوالے سے ماہرین کا مشورہ ہے کہ اس طرح کے اسٹائلز اور ٹریٹمنٹس سے گریز کریں جبکہ بالوں پر شیمپو کے بعد کنڈیشنر کا استعمال کریں۔

بالوں کو توڑنے کی عادت

اگر آپ عادتاً بالوں کو کھینچ کر توڑتے ہیں تو یہ جان لیں کہ ایسا کرنا نقصان دہ ہوتا ہے۔

جس بال کو کھینچ کر توڑا جاتا ہے وہ دوبارہ نہیں اگتا تو اس عادت سے بچنا ہی بالوں سے محرومی کا خطرہ کم کرتا ہے۔

عمر بڑھنا

عمر بڑھنے کے ساتھ بالوں کا گھنا پن کم ہوجاتا ہے اور اگر خیال نہ رکھا جائے تو مردوں میں گنج پن کا خطرہ بھی بڑھتا ہے۔

50 سال کی عمر کے بعد بالوں میں نمی کا خیال رکھنا بہت زیادہ ضروری ہوتا ہے اور ضرورت سے زیادہ اسٹائلنگ سے گریز کرنا چاہیے۔

اسٹرائیڈز کا استعمال

مسلز بنانے کے لیے بیشتر افراد اسٹرائیڈز کا استعمال کرتے ہیں جو بالوں کے لیے نقصان دہ ثابت ہوسکتے ہیں۔

اگر بال بہت تیزی سے جھڑ رہے ہیں تو اسٹرائیڈز کے استعمال چھوڑنے سے صورتحال میں بہتری لانا ممکن ہے۔

مزید خبریں :

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM