Time 02 اکتوبر ، 2023
صحت و سائنس

منہ میں چھالوں سے نجات دلانے میں مددگار آسان طریقے

یہ بہت عام مسئلہ ہے / فوٹو بشکریہ buzzrx
یہ بہت عام مسئلہ ہے / فوٹو بشکریہ buzzrx

منہ میں چھالے بہت تکلیف دہ ثابت ہوتے ہیں اور غذا کو کھانا اور بات کرنا بہت مشکل ہو جاتا ہے۔

عموماً یہ چھالے (طبی زبان میں انہیں Canker sore کہا جاتا ہے) طویل المدت نقصان کا باعث نہیں بنتے بلکہ خود ہی کچھ دنوں میں ٹھیک ہو جاتے ہیں۔

مگر جب ان چھالوں کی وجہ سے زندگی مشکل محسوس ہوتی ہے تو لوگ انہیں ٹھیک کرنے کے لیے کافی کوششیں کرتے ہیں۔

اچھی بات یہ ہے کہ چند عام طریقوں سے ان چھالوں سے نجات آسانی سے ممکن ہے۔

مگر یہ جان لیں کہ کسی بھی گھریلو ٹوٹکے سے راتوں رات ان سے نجات ممکن نہیں ہوتی۔

ماؤتھ واش سے مدد لیں

ایک عام ماؤتھ واش بھی منہ کے چھالوں کو ٹھیک کرنے میں مدد فراہم کر سکتا ہے۔

ماؤتھ واش سے کلیاں کرنے سے جراثیم کا پھیلاؤ رک جاتا ہے، چھالوں کی شدت بڑھتی نہیں جبکہ ورم سے بچنے میں بھی مدد ملتی ہے۔

مگر اس حوالے سے chlorhexidine ماؤتھ واش کا استعمال بہتر ہوتا ہے۔

نمک ملے پانی سے کلیاں

نمک ملے پانی سے کلیاں کرنے سے بھی منہ کے چھالوں سے نجات مل سکتی ہے۔

البتہ یہ طریقہ کار کچھ تکلیف دہ ہوتا ہے مگر اس سے کم وقت میں چھالوں کو خشک کرنے میں مدد ملتی ہے۔

اس طریقے کے لیے آدھے کپ گرم پانی میں ایک چائے کا چمچ نمک ملائیں۔

اس سیال کو 15 سے 30 سیکنڈ تک منہ میں گھمائیں اور پھر تھوک دیں۔

یہ عمل ہر چند گھنٹوں بعد دہرائیں۔

بیکنگ سوڈا بھی مفید

بیکنگ سوڈا ورم کو کم کرتا ہے جس سے منہ کے چھالوں سے نجات میں مدد مل سکتی ہے۔

آدھے کپ پانی میں ایک چائے کے چمچ بیکنگ سوڈا کو ملائیں اور اس سیال کو منہ میں 15 سے 30 سیکنڈ تک رکھ کر تھوک دیں۔

یہ عمل ہر چند گھنٹوں بعد دہرائیں۔

دہی

منہ میں چھالے کیوں ہوتے ہیں، اس کی ٹھوس وجہ تو معلوم نہیں مگر اکثر وہ ایک بیکٹریا Helicobacter pylori کے باعث ہوتے ہیں۔

ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ دہی میں موجود صحت کے لیے مفید بیکٹریا منہ کے چھالوں سے نجات دلانے میں مدد فراہم کر سکتے ہیں۔

اس کے لیے روزانہ کم از کم ایک کپ دہی کھانا عادت بنانا ضروری ہے۔

شہد

شہد جراثیم اور ورم کش ہوتا ہے اور تحقیقی رپورٹس سے ثابت ہوا ہے کہ اس سے زخم ٹھیک کرنے میں مدد ملتی ہے۔

یہی وجہ ہے کہ شہد سے منہ کے چھالوں کا حجم، ورم اور تکلیف میں کمی آتی ہے۔

اس مقصد کے لیے شہد کو روزانہ 4 بار چھالوں پر لگائیں، مگر یہ فائدہ اسی وقت ممکن ہے جب شہد خالص اور کم از کم پراسیس شدہ ہو۔

ناریل کا تیل

ناریل کے تیل کو بھی منہ کے چھالوں سے نجات کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

تحقیقی رپورٹس کے مطابق ناریل کا تیل ورم اور جراثیم کش ہوتا ہے جس سے چھالوں کی سوجن اور تکلیف کو کم کرنے میں مدد ملتی ہے۔

اس مقصد کے لیے ناریل کے تیل کو چھالوں پر لگائیں، یہ عمل دن میں کئی بار دہرائیں۔

سیب کا سرکہ

سیب کا سرکہ جراثیم کش ہوتا ہے اور اس سے بھی منہ کے چھالوں کو ٹھیک کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔

اس مقصد کے لیے ایک چائے کے چمچ سرکے کو ایک کپ پانی میں ملائیں اور اس سیال کو ایک منٹ تک منہ کے اندر گھما کر تھوک دیں۔

ہائیڈروجن پرآکسائیڈ

ہائیڈروجن پرآکسائیڈ سے منہ کے چھالوں کی صفائی کرنے سے انہیں ٹھیک کرنا ممکن ہے۔

اس کے لیے ہائیڈروجن پرآکسائیڈ اور پانی کی یکساں مقدار کو مکس کریں۔

اس سیال میں روئی کو ڈبو کر متاثرحصے پر لگائیں، یہ عمل دن میں چند بار دہرائیں۔

وٹامن بی 12 سپلیمنٹس

کئی بار منہ میں چھالے غذا میں وٹامن بی 12 کی کمی کا نتیجہ ہوتے ہیں۔

ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ روزانہ ایک ہزار مائیکرو گرام وٹامن بی 12 کا استعمال کرنے سے منہ میں چھالوں کا سامنا کم ہوتا ہے، جبکہ چھالے ہونے پر تکلیف کی شدت کم ہوتی ہے۔

اس حوالے سے تمام 8 بی وٹامنز پر مشتمل سپلیمنٹس کا استعمال مددگار ثابت ہوتا ہے مگر اسے استعمال کرنے سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ ضرور کریں۔

نوٹ: یہ مضمون طبی جریدوں میں شائع تفصیلات پر مبنی ہے، قارئین اس حوالے سے اپنے معالج سے بھی ضرور مشورہ کریں۔