Can't connect right now! retry

بلاگ
26 جون ، 2019

1992 یا 2019: مماثلتوں سے باہر نکلیں


کرکٹ ورلڈکپ 2019 میں پاکستان کا مایوس کن آغاز ہوا جس کے بعد ٹیم کی نپی تلی کارکردگی کے بعد شائقین ٹیم کی جیت کے لیے اس آس پر خوش ہیں کہ تاریخ خود کو دہرا رہی ہے، یہی نہیں خوش فہم تو یقین کر بیٹھے ہیں کہ ورلڈکپ 2019 کا نتیجہ بھی وہی ہوگا جو 27 سال قبل عمران خان کی قیادت میں ہوا تھا۔

یہ درست ہے کہ رواں ورلڈکپ میں پاکستان ٹیم کے نتائج کے حوالے سے جو کچھ ہو رہا ہے ایسا ہی 27 سال قبل ایونٹ میں بھی ہوا تھا، لیکن کرکٹ ایک کھیل ہے نجومیوں کی مشاہدہ گاہ نہیں جہاں صرف مشاہدات کے نتائج بھی وہی ہوں گے جو 1992 میں تھے۔

1992 کے ورلڈکپ اور 2019 کے ورلڈکپ میں مماثلت تلاش کرنے والے یہاں تک کہہ رہے ہیں کہ 92 کے ورلڈکپ میں پاکستان اور نیوزی لینڈ کا میچ بدھ کے روز کھیلا گیا اور دونوں ٹیمیں 27 سال بعد ایک مرتبہ پھر مدمقابل ہیں، 92 کے ورلڈکپ میں وسیم اکرم گراؤنڈ میں کھیل رہے تھے اور آج وہ گراؤنڈ میں کمنٹری کر رہے ہیں، یہی نہیں یہاں تک کہا جارہا ہے کہ 1992 کے ورلڈکپ میں عمران خان ٹیم کے قیادت کر رہے تھے اور آج ملک کی قیادت کر رہے ہیں۔

ٹیم کی کامیابی کے لیے مماثلت تلاش کرنا یا دعائیں کروانا قومی ٹیم کی کارکردگی کو بہتر نہیں کرسکتا اس کے لیے کھلاڑیوں کو خود محنت کرنا ہوگی، ٹیم کے لیے دعائیں کرنا اچھی بات ہے لیکن جیت کے لیے کارکردگی کا ہونا بہت ضروری ہے۔

کھلاڑی اپنی بھرپور صلاحیتوں کا استعمال نہیں کریں گے، کھلاڑیوں کا انتخاب کنڈیشن کے مطابق نہیں ہوگا اور کھلاڑیوں کو اعتماد نہیں دیں گے تو مماثلت تلاش کرتے رہیں لیکن ٹیم جیت نہیں سکے گی۔

ٹیم کی فتح کے لیے ٹیم کو جرات مندانہ انداز میں مخالف ٹیم کے مدمقابل اتارنا ہوگا، بے جا تنقید، کھلاڑیوں کی غیر ضروری ڈانٹ ڈپٹ، شکست کا خوف یہ تمام عوامل ٹیم کی مجموعی کارکردگی پر اثرانداز ہوتے ہیں۔

ورلڈکپ 2019 اور 1992 سے جڑی چند مماثلتیں:

27 سال قبل بھی پاکستان نے ویسٹ انڈیز کیخلاف شکست کے ساتھ ٹورنامنٹ کا آغاز کیا اور اس بار بھی ایسا ہی ہوا۔

1992 میں گرین شرٹس نے ایونٹ کا دوسرا میچ جیتا اور تیسرا میچ بارش کی نظر ہوا اور 27 سال بعد بھی ایسا ہی ہوا۔ 

پاکستان ٹیم نے 27 سال قبل جب اپنا چھٹا میچ جیتا تو مین آف دی میچ لیفٹ آرم بیٹسمین عامر سہیل تھے، اس بار جب قومی ٹیم نے چھٹے میچ میں جنوبی افریقا کو شکست دی تو مین آف دی میچ لیفٹ آرم بیٹسمین حارث سہیل تھے، دونوں کے نام میں سہیل کی مماثلت ہے۔


جیو نیوز، جنگ گروپ یا اس کی ادارتی پالیسی کا اس تحریر کے مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔

Notification Management


پاکستان
دنیا
کاروبار
کھیل
انٹرٹینمنٹ
صحت و سائنس
دلچسپ و عجیب

ڈیسک ٹاپ نوٹیفکیشن کے لیے سبسکرائب کریں
Powered by IMM