دنیا
Time 26 فروری ، 2024

بنگلا دیش کے جنگلی ہاتھیوں کی حفاظت کیلیے تاریخی اقدام

بنگلہ دیش میں صرف 200 کے قریب ہاتھی باقی ہیں /فوٹوفائل
بنگلہ دیش میں صرف 200 کے قریب ہاتھی باقی ہیں /فوٹوفائل 

بنگلا دیش کے جنگلی ہاتھیوں کی حفاظت میں اہم قدمات کی انتہائی خوش آئند خبر آئی ہے۔ 

جانوروں حقوق کے گروپوں نے ہائی کورٹ کی معطلی کا خیرمقدم کرتے ہوئے ایک عدالتی حکم نامہ حاصل کیا ہے، اس حکم نامہ میں ہاتھیوں کے گود لینے پر پابندی عائد کی گئی ہے جو کہ ان کے استحصال سے بچانے کا اہم اقدام ہے۔

پچھلے سال اس معاملے پر روشنی ڈالی گئی تھی کیونکہ بنگلا دیش میں ہاتھیوں کو سڑکوں پر بھیک مانگنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے اور انہیں اکثر چمکدار رنگوں میں پینٹ کیا جاتا رہا ہے اور اغوا کاروں کے ذریعے ہاتھیوں کو اغوا کرکے کرتب دکھانے پر مجبور بھی کیا جاتا ہے۔

بنگلا دیش میں صرف 200 کے قریب ہاتھی باقی ہیں، جن میں سے نصف قید میں ہیں۔ بنگلا دیش میں ایشیائی ہاتھیوں کی تعداد میں واضح کمی آئی ہے، جو کہ غیر قانونی شکار اور رہائش کے نقصان کے نتیجے میں ہوئی ہے۔

پچھلی اسکیم میں، نوجوان ہاتھیوں کو قید میں لینے کا امکان تھا، لیکن عدالت نے اس طرح کے استحصال کی شدت کو مد نظر رکھتے ہوئے اس پر پابندی عائد کردی۔ اب جانوروں کے حقوق کی تنظیموں کی جانب سے امید ہے کہ قیدی ہاتھیوں کی بازیابی ممکن ہو سکتی ہے۔

پیپل فار اینیمل ویلفیئر (PAW) فاؤنڈیشن کے سربراہ رقیب الحق ایمل نے اس اقدام کو "تاریخی حکم" قرار دیا ہے اور  کہاں ہے کہ اب جانوروں کے تشدد کے خاتمے کی راہ میں اہم قدم اٹھایا گیا ہے۔

بنگلا دیشی اداکار جیا احسن نے بھی اس معاملے میں PAW کے ساتھ قانونی مقدمہ شروع کیا ہے، اور انہیں امید ہے کہ ان کی کوششوں سے جانوروں پر کی جانے والی سخت "تربیت" کا خاتمہ ہو گا۔

مزید خبریں :